.

پاکستان: ضمنی انتخابات میں حکمران جماعت کی برتری برقرار

خیبر پختونخوا کے بعض علاقوں میں خواتین کو ووٹ ڈالنے سے روکنے کی اطلاعات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کی تاریخ کے سب سے بڑے ضمنی انتخابات کے غیر سرکاری نتائج کے مطابق پاکستان کے ضمنی انتخابات میں قومی اور صوبائی اسمبلی کی انتالیس میں سے اٹھارہ نشتوں پر مسلم لیگ نواز گروپ کو کامیابی ملی ہے۔ پشاور سے تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان کی خالی کردہ نشست پر ان کی حریف عوامی نیشنل پارٹی 'اے این' پی جیت گئی ہے۔

گذشتہ روز ہونے والے ضمنی انتخابات سے یہ تو توقع نہیں کی جا رہی تھی کہ وہ کسی بڑی تبدیلی کا پیش خیمہ ثابت ہوں گے، تاہم جو نتائج سامنے آئے ہیں وہ بڑی حد تک اسی رجحان کی نشان دہی کر رہے ہیں جو کہ گیارہ مئی کے عام انتخابات میں دیکھا گیا تھا۔ تاہم بعض نتائج تین ماہ کے عرصے کے دوران پاکستانی عوام کے بدلتے موڈ کی عکاسی بھی کر رہے ہیں۔

قومی اور صوبائی اسمبلی کی انتالیس نشستوں پر ہونے والے ضمنی انتخابات کے لیے ووٹوں کی گنتی ہو چکی ہے۔ گو کہ پولنگ کے دوران کسی بڑے نا خوشگوار واقعے کی اطلاعات سامنے نہیں آئیں تاہم بعض حلقوں میں دھاندلی کے الزامات، پاکستانی سکیورٹی فورسز پر دہشت گردانہ حملوں اور صوبہ خیبر پختون خواہ کے بعض علاقوں میں خواتین کے ووٹ ڈالنے پر پابندی نے انتخابات کی شفافیت پر اثر ڈالا ہے۔

توقع کے مطابق مرکز اور پنجاب میں حکمران جماعت مسلم لیگ نواز گروپ کو ہی زیادہ تر نشستوں پر اکثریت حاصل رہی۔ وزیر اعظم نواز شریف کی جماعت نے انتالیس میں سے اٹھارہ نشستوں پر کامیابی حاصل کی۔

غیر سرکاری نتائج کے مطابق پشاور سے تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کی خالی کردہ قومی اسمبلی کی نشست پر ان کی حریف جماعت عوامی نیشنل پارٹی کے غلام احمد بلور کامیاب ہو گئے ہیں۔ خیال رہے کہ تحریک انصاف گیارہ مئی کے انتخابات میں خیبر پختون خواہ کی سب سے بڑی جماعت بن کر ابھری تھی اور اس نے صوبے کی سابق حکمران جماعت کا تقریباً صفایا کر کے رکھ دیا تھا۔ اب ضمنی انتخابات میں عمران خان کی نشست پر بلور کی کامیابی کو مبصرین عوام کا کسی حد تک تحریک انصاف سے بد دلی کا مظہر قرار دے رہے ہیں۔

تاہم تحریک انصاف کے رہنما اسد عمر کی اسلام آباد کی نشست پر کامیابی کو تحریک انصاف کے لیے اچھا شگون قرار دیا جا رہا ہے۔ سند کے شہر ٹھٹہ سے قومی اسمبلی کی نشست پر مسلم لیگ کو ناکامی ہوئی ہے۔ سندھ میں متحدہ قومی موومنٹ اور پیپلز پارٹی کو بھی کامیابی حاصل ہوئی ہے۔ خیبر پختونخواہ کے بعض علاقوں میں خواتین کو ووٹ ڈالنے سے روکے جانے کا پاکستانی الیکشن کمیشن نے نوٹس لے لیا ہے۔