.

خشک میوہ جات ۔۔۔ 3 راز جو آپ نہیں جانتے !

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

خشک میوہ جات کے فوائد بظاہر نظر نہیں آتے کیوں کہ وہ چھپے ہوئے ہوتے ہیں۔ ان سے خون میں نقصان دہ کولیسٹرول جس کو طبی اصطلاح میں LDL کہتے ہیں اس کی سطح کم ہوتی ہے اور یہ امراض قلب سے بھی انسان کی حفاظت کرتے ہیں۔ روزانہ 30 گرام خشک میوہ جات کی مقدار (یعنی جتنی ایک نارمل جیب یا ہاتھ کی مٹھی میں آتی ہے) کھا لینا کافی ہے۔ حالیہ تحقیقی رپورٹوں کے مطابق ایسا کرنے سے آپ کی متوقع عمر میں دو سال کا اضافہ ہوسکتا ہے۔ تاہم یہ ان بے شمار رازوں کی صرف ایک جھلک ہے جو خشک میوہ جات اپنے اندر سموئے ہوئے ہیں۔

1. خشک میوہ جات سے وزن میں اضافہ نہیں ہوتا

ہو سکتا ہے کہ یہ خشک میوہ جات کا یہ سب سے عظیم راز ہو کہ اس کا زیادہ کھانا وزن میں اضافے کا باعث نہیں بنتا۔ برطانوی اخبار "ڈیلی میل" کے مطابق اس بات نے سائنس دانوں کو حیرت میں ڈال دیا اور وہ خشک میوہ جات کھانے اور وزن میں اضافے کے درمیان تعلق ثابت کرنے کے لیے 20 سے زیادہ تجربے کرنے پر مجبور ہوگئے تاہم انہیں اس تعلق کی کوئی دلیل نہیں مل سکی۔

مثال کے طور پر ایک تجربے کے دوران شرکاء کو 3 ماہ تک روزانہ "پستے" کے 120 دانے کھلائے گئے۔ بعد ازاں سامنے آنے والے نتیجے نے محققین کو حیران کر ڈالا کیوں کہ تجربے کے اختتام پر شرکاء کے وزن میں کوئی اضافہ نہیں ہوا تھا... باوجود اس کے کہ پستوں کی اس مجموعی مقدار میں تقریبا 30 ہزار کیلوریز ہوتی ہیں۔

دراصل راز یہ ہے کہ خشک میوے کھا کر کسی بھی دوسری چیز کے مقابلے میں انسان کی طبیعت سیر ہونے کا جلد احساس ہوجاتا ہے۔ ان میوہ جات کا ایک حصہ (تقریبا 10٪) جذب ہوئے بغیر نظام ہضم میں گھومتا رہتا ہے جب کہ خون میں جذب شدہ حصہ جسم میں چکنائی کو جلانے کے عمل کو تیز کردیا ہے۔ اس طرح کہ اگر کسی شخص نے خشک میوہ جات کھائے ہیں تو اگلے 8 گھنٹوں کے دوران 30 گرام چکنائی کے جلنے کا عمل ہوگا جب کہ عام حالات میں اتنے دورانیے میں 20 گرام چکنائی جلتی ہے۔

2. خشک میوہ جات ذیابیطس کے مریضوں کے لیے جادوئی نسخہ

خشک میوہ جات کی پوشیدہ صفات میں سے ایک یہ بھی ہے کہ ان کو کھانے کے بعد خون میں شکر کی سطح میں بہت زیادہ اضافہ نہیں ہوتا کیوں ان میں غیرسیر شدہ چکنائی اور پروٹین کی بڑی مقدار کے مقابلے میں شکر(گلوکوز) کی بہت کم مقدار ہوتی ہے۔ اسی لیے ذیابیطس کے مریضوں کو اپنی روزانہ کی غذا میں خشک میوہ جات بھی شامل کرنے کی ہدایت کی جاتی ہے۔

اس کے علاوہ خشک میوہ جات میں "اومیگا 3" فیٹی ایسڈ بھی پایا جاتا ہے جو کہ مچھلی میں بھی ہونے کی وجہ سے اس کے گوشت کو امتیازی حیثیت دیتا ہے۔ اس سے خون میں کولیسٹرول کی مقدار کم ہوتی ہے جس کے نتیجے میں ذیابیطس کے مریضوں کو امراض قلب کے خلاف زیادہ قوت مدافعت حاصل ہوتی ہے۔

3. خشک میوہ جات چھاتی کے سرطان سے حفاظت میں معاون

بہت سی تحقیقوں سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ روزانہ کی بنیاد پر خشک میوہ جات کھانے سے خواتین چھاتی کے سرطان سے محفوظ رہتی ہیں۔ ان میں ہارورڈ یونی ورسٹی میں ہونے والی تحقیق بھی شامل ہے۔ تحقیق میں تقریبا روزانہ خشک میوہ جات کھانے والی خواتین کا موازنہ کبھی کبھار کھانے والی خواتین کے ساتھ کیا گیا۔ نتیجے کے مطابق روزانہ خشک میوہ جات کھانے والی خواتین میں چھاتی کے سرطان میں مبتلا ہونے کی شرح بڑی حد تک کم تھی۔