.

مسجد حرام میں اذان کی سب سے پرانی ریکارڈنگ سماعت فرمائیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب میں معروف ثقافتی مرکز "دارہ ملک عبدالعزیز" کی جانب سے مسجد حرام کی اذان کی سب سے پرانی صوتی ریکارڈنگ کا انکشاف کیا گیا ہے۔ یہ ریکارڈنگ 138 برس سے زیادہ پرانی ہے۔

اس اذان کو ہالینڈ کے معروف مستشرق اور سیاح Christiaan Snouck Hurgronje نے 1302 ہجری مطابق 1885ء میں ریکارڈ کیا تھا۔ یہ ہالینڈ میں لائڈن یونیورسٹی میں محفوظ ہے۔

مذکورہ سیاح نے اپنی کتاب Mekka in the Latter Part of the 19th Century میں بتایا ہے کہ اس نے مکہ مکرمہ میں سورہ الضحی کی تلاوت سمیت کئی آوازیں ریکارڈ کیں،،، اور اپنی کتاب میں مکہ اور جدہ کے بارے میں مشاہدات اور تاثرات قلم بند کیے۔ کتاب میں اُس وقت کے حرم مکی کے مؤذن (جو ہو سکتا ہے کہ وہ ہی شخصیت ہوں جن کی آواز ریکارڈنگ میں ہے) کی تصاویر اور دیگر واقعات بھی شامل ہیں۔

مسجد حرام کی تاریخ سے متعلق ایک محقق نے اذان کی صوتی ریکارڈنگ پر تبصرہ کرتے ہوئے "العربیہ ڈاٹ نیٹ" کو بتایا کہ مؤذن کی آواز کا لہجہ، مؤذن کی آواز کے ساتھ دیگر مؤذنین کی آواز کا شامل نہ ہونا (یاد رہے کہ اُس زمانے میں 7 میناروں سے بیک وقت 7 مؤذن اذان دیا کرتے تھے)، ریکارڈنگ کی بھاری مشین کو منار تک چڑھا کر لے جانا، آواز کی کوالٹی اور واضح ہونا ... یہ تمام امور اس بات کا پتہ دیتے ہیں کہ یہ اذان ریکارڈنگ کی غرض سے ہالینڈ کے مستشرق کے واسطے خصوصی کمرے میں دی گئی تھی۔ اس بات کا بھی امکان ہے کہ یہ عمل مکہ مکرمہ میں نہیں بلکہ جدہ شہر میں پورا کیا گیا ہو۔

اس سے قبل مذکورہ مستشرق کے حوالے سے اسی سال کی ایک اور ریکارڈنگ منظر عام پر آ چکی ہے جس کو مسجد حرام کی تلاوت کی قدیم ترین ریکارڈنگ شمار کیا گیا ہے۔