.

فلسطین کے حوالے سے سٹیٹس کو قبول نہیں: فرانس

فرانسیسی پارلیمنٹ میں فلسطینی ریاست کے حق میں قرارداد پیش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فرانسیسی پارلیمنٹ کی طرف سے آج فلسطینی ریاست کے حق میں قرار داد منظور کیے جانے کے لیے ووٹنگ کی تیاری ہے۔ قرار داد سوشلسٹ پارٹی کی طرف سے پارلیمنٹ میں پیش کر دی گئی ہے۔

قرارداد کی منظوری کی صورت میں بھی فرانس کے سفارتی موقف اور پالیسی میں کسی فوری تبدیلی کا امکان نہیں، کیونکہ یہ قراراد محض علامتی نوعیت کی ہو گی۔

تاہم اس قرار داد کی منظوری سے مشرق وسطی میں امن عمل کے معطل کیے جانے اور اسرائیلی ہٹ دھرمی کے بارے میں پائے جانے والے اضطراب کا اظہار ضرور ہو گا۔

سویڈن اور برطانیہ کے قانون سازوں کے بعد فرانسیسی قانون سازوں کی طرف سے فلسطینی ریاست کے حق میں یہ قرارداد مغربی دنیا کی ایک مضبوط آواز ثابت ہو گی۔

واضح رہے بہت سے ترقی پذیر ممالک فلسطینی ریاست کو تسلیم کرتے ہیں، لیکن مغربی یورپ کے ملک تسلیم نہیں کرتے ہیں۔ ان ممالک کا موقف اسرائیل اور امریکا کے اس موقف کے حق میں ہیں کہ فلسطینی ریاست کا وجود مذاکرات کے ذریعے ممکن بنانا چاہیے۔

اس کے باوجود مغربی ممالک کے عوام میں بیداری بڑھ رہی ہے اور وہ اسرائیل کی طرف سے فلسطینیوں کے خلاف پالیسیوں اور اقدامات پر اب ناخوشی ظاہر کرتے ہیں۔

فلسطینی عوام بھی اسرائیل کے امن عمل کے حوالے سے رویے سے سخت مایوس ہیں اور وہ سمجھتے ہیں کہ اسرائیل امن مذاکرات کو اس لیے خراب کرتا ہے کہ فلسطینی ریاست کی راہ ہموار نہ ہو سکے۔ لہٰذا ضروری ہے کہ فلسطینی ریاست کے لیے دوسرے طریقے بھی آزمائے جائیں۔

اسرائیلی رویے کے خلاف اس حوالے سے حالیہ مہینوں کے دوران پہلا ردعمل سویڈن کی طرف سے ماہ اکتوبر میں سامنے آیا ، بعد ازاں برطانوی پارلیمنٹ میں بھی فلسطینی ریاست کے حق میں ایک قرار داد منظور کر لی گئی۔

اسرائیل ایسی تمام کوششوں کی سختی سے مخالفت کرتا ہے۔ اسرائیلی وزیر اعظم نے فرانس کی اس متوقع قرار داد پر پہلے ہی ناگواری اور مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے اسے سنگین غلطی قرار دیا تھا۔

فرانس کی پارلیمنٹ میں فلسطینی ریاست کے حق میں قرار داد حکمران سوشلسٹ جماعت کی طرف سے پیش کی گئی ہے جبکہ بائیں بازو کی دیگر جماعتیں بھی اس کی حمایت کر رہی ہیں۔

فرانس کے وزیر خارجہ لاورینٹ فابئیس نے اس قرار داد کی منظوری سے پہلے پارلیمنٹ سے اپنے خطاب میں کہا ہے '' حکومت اس قرارداد پر عمل کرنے کی پابند نہیں ہے، تاہم مشرق وسطی میں ''سٹیٹس کو'' کی حالت بھی فرانس کے لیے قابل قبول نہیں ہے ۔''

وزیر خارجہ نے مزید کہا '' امن مذاکرات کا آخری مرحلہ بھی ناکام رہا تو فرانس امن مذاکرات کے بغیر ہی فلسطین کو تسلیم کرنے کا اعلان کر دے گا۔''