.

ایران، ترکمانستان اور قازقستان میں ریلوے لائن کا افتتاح

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران اور وسطی ایشیاء کی دو ریاستوں ترکمانستان اور قازقستان کے درمیان ٹرین سروس کا افتتاح کیا گیا ہے۔ اس سروس کا آغاز ایک طویل ریلوے لائن منصوبے کی تکمیل کے بعد ممکن ہوا۔

تینوں ملکوں کے درمیان ریلوے لائن بچھانے کے منصوبے کی افتتاحی تقریب ترکمانستان کے’’آک یائیلا‘‘ ریلوے اسٹیشن پر منعقد ہوئی جس میں تینوں ملکوں کے صدور شریک ہوئے۔

ایران کی سرکاری خبر رساں ایجنسی [ایرنا] کے مطابق ’’آک یائیلا‘‘ اسٹیشن پر ترکمانستان کے صدر قلی بردی محمداف نے ایرانی صدر ڈاکٹر حسن روحانی اور قزاقستان کے سربراہ سلطان نظر بایوف کا استقبال کیا۔

رپورٹ کے مطابق تینوں ملکوں کے سربراہان نے مجموعی طور پر 926 کلومیٹر طویل ریلوے لائن بچھانے کے منصوبے کی تکمیل کے بعد ٹرین سروس کا افتتاح کیا۔ منصوبے کے تحت ریلوے لائن کا بڑا حصہ ترکمانستان کی سر زمین ہی سے گذرے گا۔

ترکمانستان کے حصے میں ریلوے لائن کا 700 کلو میٹر، قازقستان کے حصے میں 146 کلومیٹر جبکہ ایران میں 80 کلومیٹر ریلوے لائن بچھائی گئی۔ اس ریلوے لائن سے وسطی ایشیائی ریاستوں کی عالمی پانیوں تک رسائی ممکن ہو گئی ہے۔

ابتدائی طور پر ریلوے لائن سے ڈیڑھ ملین ٹن سامان کی ترسیل ممکن ہو گی تاہم پیش آئند مراحل میں یہ مقدار 10 ملین ٹن تک جا سکتی ہے۔ ریلوے لائن پر چلنے والی ریل گاڑی کم سے کم 120 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے سفر کرے گی۔

بیس گھنٹوں میں 3000 کلومیٹر کا سفر طے کرتے ہوئے وہ خلیجی پانیوں تک پہنچے گی۔ تینوں ملکوں کے اشتراک سے تیار کئے گیے ریلوے لائن منصوبے کو خلیج عرب اور بحر عمان تک رسائی دی جائے گی۔ خیال رہے کہ تینوں ملکوں نے ریلوے لائن کے مشترکہ منصوبے پر کام سنہ 2009ء میں شروع کیا تھا۔

ایرانی خبر رساں ایجنسی کے مطابق صدر حسن روحانی نے ترکمانی اور قازقستانی ہم منصبوں سے ملاقات کے بعد ایک نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ "یہ منصوبہ ایران اور وسطی ایشیائی ریاستوں کے درمیان اقتصادی تعاون اور ترقی کا سنگ میل ثابت ہو گا اور ایران کے خطے کے دوسرے ممالک کے ساتھ بھی اقتصادی روابط بڑھیں گے۔"

انہوں نے کہا کہ ہم جلد ہی چین اور ایران کے درمیان بھی ایک ریلوے لائن کے منصوبے کا افتتاح کریں گے۔ اس ریلوے لائن کو بحر قزوین، خلیج، بحر متوسط اور مغرب میں پاکستان، بھارت سے بھی بالواسطہ اور براہ راست تک رسائی دی جائے گی۔ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے قازقستان کے صدر نور سلطان نظر بایوف نے کہا کہ مشترکہ ریلوے لائن پراجیکٹ تینوں ملکوں کی اہم ترین کامیابی ہے۔