.

سعودی خواتین کا صحت آگہی مہم کے تحت نیا عالمی ریکارڈ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی خواتین نے صحت کی سہولیات کے حوالے سے آگہی مہم کے تحت 10 ہزار خواتین کی مدد سے چھاتی کے سرطان کا عالمی نشان "گلابی ربن" بنایا ہے جس کے نتیجے میں ان کا نام گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈز میں آگیا ہے۔

نورہ بنت عبدالرحمان یونیورسٹی کے گرائونڈ میں گلابی رنگ کے سکارف اوڑھے کھڑی ان خواتین نے کامیابی سے یہ عالمی ریکارڈ قائم کیا۔

الف خیر کے نام سے چلنے والی سوشل انٹرپرائز کی بانی شہزادی ریما بنت بندر بن سلطان السعود نے مقامی اخبار سعودی گزٹ سے بات کرتے ہوئے کہا "آج 10 ہزار خواتین نے یہ اعلان کر دیا ہے کہ مکمل صحت ہی بطور مائیں، بہنیں اور بیٹیاں ہمارے کامیاب مستقبل کی ضمانت ہے۔"

ان کا مزید کہنا تھا کہ "ہم مستقبل کی آواز ہیں اور اگر ہم اپنا خیال خود رکھیں گی تو ہمارا مستقبل تابناک ہوگا۔ اگر ایسا نہیں ہوگا تو ہمارا مستقبل تاریک ہے اور نہ ہی میں اور میرے ساتھ موجود 1900 رضاکار خواتین، 53 تنظیمیں، اور دس ہزار خواتین ایسا دیکھنے کی خواہش رکھتی ہیں۔"

خواتین کے الیکشن میں حصہ لینے اور ووٹ ڈالنے کے حوالے سے ریما السعود کا کہنا تھا "یہ سعودی خواتین کے لئے انتہائی فخر کا لمحہ ہے کیوںکہ ہم نے ووٹ ڈالا ہے اور ہم تمام معاشرے کی بہتری کے ایک مثبت پہلو میں شریک ہوئے ہیں۔ یہ ہم سب کے لئے ایک بڑا موقع ہے۔"

اس موقع پر ایک اور منتظم ڈاکٹر مودیا بیٹرجی کا کہنا تھا کہ ان کا بنیادی مقصد خواتین کی مکمل صحت کی طرف توجہ دلانا تھا اور انہوں نے زور دیا کہ مکمل صحت ہی مضبوط معاشرے کی بنیاد ہے۔

اس موقع پر زھرہ بریسٹ کینسر ایسوسی ایشن کی ایک رکن ھالہ اسیل نے بتایا کہ اس آگہی مہم کے نتیجے میں آج کئی افراد کو فائدہ ہوا ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ "میں دس ہزار خواتین کے ساتھ بنائے جانے والے اس ریکارڈ کی عالمی ریکارڈز میں شمولیت کی منتظر ہوں۔"

گنیز ورلڈ ریکارڈز کے منصف سیدا سباسی گمیچی کا کہنا تھا کہ "میں ریاض میں سب سے بڑے انسانی آگہی ربن کے ریکارڈ کو توڑنے کی کوشش کا عینی شاہد ہوں، جس میں سعودی عرب کی خواتین نے حصہ لیا ہے۔"

اس ریکارڈ نے بھارت میں بنایا گیا پچھلا ریکارڈ توڑ ڈالا، جس میں 6847 افراد نے شرکت کی تھی۔

سباسی گمیچی نے ریکارڈ کی وضاحت کرتے ہوئے بتایا "اس ریکارڈ کو بنانے کے لئے تمام شرکاء کو ایک ہی رنگ کے کپڑے پہننا ہوں گے تاکہ فضائی منظر سے یہ ایک ہی رنگ کا دکھائی دے۔ اس کے علاوہ تمام شرکاء کو کم از کم پانچ منٹ کے لئے ایک ہی جگہ پر کھڑا ہونا ہوگا۔"