.

اعلیٰ ایرانی عہدیدار شام اور روس کے لیے رابطہ کار مقرر

علی شمخانی ایرانی قومی سلامتی کونسل کے سربراہ ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران کی جانب سے شام میں اپنا اثر ورسوخ بڑھانے کے لیےآئے روز نئے اقدامات اٹھائے جا رہے ہیں۔ انہی اقدامات میں ایران کی قومی سلامتی کونسل کے سیکرٹری جنرل علی شمخانی کو شام اور روس کے لیے ایران کا فوجی رابطہ کار مقرر کیا جانا بھی شامل ہے۔

شام اور عراق میں ایرانی مداخلت کسی سے ڈھکی چھپی نہیں بلکہ تہران پورے فخر کے ساتھ ان ملکوں کے اداروں پر اثرانداز ہونے کی کوشش کررہا ہے۔

چند روز قبل پاسداران انقلاب کی بیرون ملک سرگرم القدس ملیشیا کے سربراہ جنرل قاسم سلیمانی کو بغداد حکومت کی جانب سے عراق کے فلوجہ شہر میں عسکری مشیر مقرر کیا گیا تھا۔ اب شام اور روس کے لیے رابطہ کار کی ذمہ داری قومی سلامتی کونسل کے سیکرٹری جنرل علی شمخانی کے سپرد کی گئی ہے۔

علی شمخانی کی بہ طور ملٹری رابطہ کار کے تقرری تہران میں منعقدہ ایران، شام اور روس کے وزراء دفاع کے مشترکہ اجلاس کےدوران کی گئی۔

علی شمخانی کے شام اور صدربشارالاسد کے بارے میں بیانات ریکارڈ پر موجود ہیں۔ انہوں نے ماٰضی میں متعدد مرتبہ کھل کر صدر بشارالاسد کی حمایت کی اور ان کے خلاف جاری عوامی بغاوت کو دشمنوں کی سازش سے تعبیر کیا ہے تاہم انہوں نے جنگ کے بجائے شام کے بحران کو بات چیت کے حل پر بھی زور دیا تھا۔