.

بنگلہ دیش میں نماز عید کے موقع پر بم دھماکے

ایک پولیس اہلکار سمیت دو افراد ہلاک، نو سے زائد زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

بنگلہ دیشی حکام کے مطابق جمعرات کی صبح دارلحکومت ڈھاکا میں نماز عید الفطر کے سب سے بڑے اجتماع کی سیکیورٹی پر مامور اہلکاروں پر مشتبہ اسلامی بنیاد پرستوں نے گھریلو ساختہ بموں سے حملہ کیا، جس کے نتیجے میں کم سے کم دو افراد ہلاک جبکہ دسیوں دیگر زخمی ہو گئے۔

عید کے روز یہ واقعہ ڈھاکا سے نوے کلومیٹر دور کشور گنج ضلع میں نماز عید کے ایک بڑے اجتماع میں پیش آیا جہاں تین لاکھ سے افراد عید الفطر کی نماز ادائی کے لئے جمع تھے۔

بنگلہ دیشی وزیر اطلاعات حسن الحق انو نے بتایا کہ حملہ آوروں کا ہدف نماز عید کی سیکیورٹی پر مامور پولیس کی پیٹرولنگ پارٹی تھی۔ بم حملے میں ایک پولیس اہلکار اور عام شہری ہلاک ہوئے۔

مسٹر انو نے بھارتی نشریاتی ادارے سی این این-نیوز کو بتایا کہ حملے میں نو دیگر پولیس اہلکار بھی زخمی ہوئے۔

تشدد کے حالیہ واقعہ سے صرف چند روز قبل بنگلہ دیش کے ایک ریستوران میں داعش کے انتہا پسندوں نے متعدد افراد کو یرغمال بنا لیا اور پھر اندھا دھند فائرنگ کر کے 22 افراد کو موت کے گھاٹ اتار دیا۔ مرنے والوں میں 20 یرغمالی اور دو پولیس اہلکار شامل تھے۔ سیکیورٹی اہلکاروں کے ایکشن میں چھ دہشت گرد بھی ہلاک ہوئے۔