اسرائیلی زندانوں میں 56 فلسطینی خواتین پابند سلاسل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

فلسطینیوں کے خلاف اسرائیلی فوج کے وحشیانہ کریک ڈاؤن کے نتیجےمیں مردوں کے ساتھ ساتھ خواتین کی گرفتاریوں کا سلسلہ بھی جاری ہے۔ ایک رپورٹ کے مطابق اسرائیلی زندانوں میں پابند سلاسل فلسطینی خواتین کی تعداد 56 ہوگئی ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق رپورٹ میں بتایا ہے کہ گذشتہ ماہ اسرائیلی فوج نے 14 سالہ ملال الغلیظ سمیت 8 خواتین کو حراست میں لے کر زندانوں میں ڈالا۔ جس کے بعد خواتین اسیرات کی تعداد چھپن ہوگئی ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ اسرائیلی جیلوں میں قید 13 لڑکیوں کی عمریں اٹھارہ سال سے کم ہیں اور ان کی شناخت ایمان علی، مرح جعیدہ، لمیٰ البکری، امل کبھا، منار شویکی، ملاک الغلیظ، ھدیہ عرینات اور ملکک سلیمان کے ناموں سے کی گئی ہے۔

جیلوں میں قید کئی خواتین کو سخت ترین سزاؤں کا بھی سامنا ہے۔ زخمی حالت میں گرفتار کی گئی نورھان عواد کو 13 سال، اسراء جعابیص کو 11 سال اور شروق دویات کو 16 سال قید کی سزائیں سنائی گئی ہیں۔

خیال رہے کہ اسرائیل کی22 جیلوں میں 6500 فلسطینی پابند سلاسل ہیں۔ 29 اسیران اوسلو معاہدے سے پہلے سے قید ہیں۔ اسیران میں 11 ارکان پارلیمنٹ اور 500 انتظامی قیدی بھی شامل ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں