.

دو سالہ تعطل کے بعد ’بن لادن‘ توسیع حرم میں دوبارہ سرگرم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

دو سال قبل مسجد حرام میں کرین کے المناک حادثے کے بعد سعودی عرب کی سب سے بڑی تعمیراتی فرم ’بن لادن‘ نے توسیع کا کام روک دیا تھا۔ دو سالہ تعطل کے بعد کمپنی نے حرم مکی میں اپنا کام دوبارہ شروع کردیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق مسجد حرام کی توسیع کے منصوبے پر 26 ارب 60 کروڑ ڈالر کی لاگت کا تخمینہ لگایا گیا ہے اور یہ ٹھیکہ بن لادن کمپنی کو دیا گیا تھا۔

خبر رساں ادارے’رائیٹرز‘ نے ایک مصدقہ ذریعے کے حوالے سے اطلاع دی ہے کہ دو سالہ تعطل کے بعد بن لادن گروپ نے مسجد حرام کی توسیع کا کام دوبارہ شروع کردیا ہے۔

خیال رہے کہ دو سال قبل مسجد حرام میں کرین کے المناک حادثے میں کم سے کم 107 افراد شہید ہوگئے تھے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ حکومت کی جانب سے بن لادن گروپ کو توسیع حرم کے منصوبے پر کام دوبارہ شروع کرنے کی اجازت دے دی ہے۔ حکومت کی طرف سے اجازت ملنے کے بعد کمپنی اپنے تمام ملازمین کو ان کے روکے گئے واجبات 20 اگست سے ادا کرنا شروع کردے گی جب کہ کمپنی توسیعی کاموں کا آغاز حج کے فوری بعد شروع کرے گی۔

سعودی وزارت خزانہ کی جانب سے رائیٹرز کے دعوے پر کسی قسم کا رد عمل سامنے نہیں آیا ہے۔

یاد رہے کہ مسجد حرام میں کرین کا حادثہ ستمبر 2015ء کو پیش آیا تھا۔ مسجد میں نمازیوں پر گرنے والی کرین بن لادن گروپ کی طرف سے نصب کی گئی تھی۔ اس حادثے کے بعد مسجد حرام کی توسیع کا کام روک دیا گیا تھا۔ مسجد حرام کی توسیع کے پروگرام کی بحالی کا انکشاف ایک ایسے وقت میں ہوا جب سعودی عرب کی حکومت کو عالمی منڈی میں تیل کی قیمتوں میں کمی کے باعث مالی دباؤ کا بھی سامنا ہے۔

تاہم بن لادن گروپ کو توسیع حرم کے منصوبے پر دوبارہ کام شروع کرنے کی اجازت ملنے سے یہ واضح ہوتا ہے کہ سعودی حکومت کے پاس اس منصوبے کو آگے بڑھانے کے لیے بجٹ موجود ہے۔ نیز بن لادن کمپنی کے حوالے سے اٹھنے والی تمام شکایات کا بھی ازالہ کردیا گیا ہے۔