.

پیراگوائے نے بھی اپنا سفارت خانہ بیت المقدس منتقل کر دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

جنوبی امریکا کے ملک پیراگوائے نے آج پیر کے روز اسرائیل میں اپنا سفارت خانہ تل ابیب سے بیت المقدس منتقل کر دیا۔ پیراگوائے کے صدر ہوراسیو کارتس سفارت خانے کی منتقلی کی تقریب میں شرکت کے لیے اتوار کے روز سے بیت المقدس میں موجود ہیں۔ ان کی مدّت صدارت دو ماہ بعد اختتام پذیر ہو رہی ہے۔

ہوراسیو کارتس پیراگوائے میں تمباکو کی صنعت سے تعلق رکھنے والی کروڑ پتی شخصیت ہیں۔ ان کے بعد 15 اگست کو 46 سالہ لبنانی نژادMario Abdo Benitez صدارت کی کرسی سنبھالیں گے۔ ماریو نے رواں برس اپریل میں صدارتی انتخابات میں کامیابی حاصل کی تھی۔

امریکا اور گوئٹے مالا کے بعد پیراگوائے تیسرا ملک ہے جس نے اسرائیل میں اپنے سفارت خانہ تل ابیب سے مقبوضہ بیت المقدس منتقل کیا ہے۔

گوئٹے مالا نے بدھ کے روز اپنا سفارت خانہ بیت المقدس منتقل کیا تھا۔ اس کے صدر جیمی مورالیس کے فیصلے پر امریکی سفارت خانے کی منتقلی کے دو روز بعد عمل درامد ہوا۔ گوئٹے مالا کے فیصلے نے خاص طور پر مراکش کو چراغ پا کر دیا۔ مراکش کے دارالحکومت رباط کی بلدیہ کے نائب سربراہ لحسن العمرانی نے ہفتے کے روز اعلان کیا کہ شہر کی انتظامیہ نے گوئٹے مالا سِٹی کے ساتھ شراکت داری میں تمام منصوبوں کو معلق کر دیا ہے۔ یہ فیصلہ گوئٹے مالا کے اپنے سفارت خانے کو تب ابیب سے بیت المقدس منتقل کرنے کے خلاف احتجاجا کیا گیا۔

پیراگوائے کی مجموعی آبادی 70 لاکھ ہے۔ ان میں 70 ہزار سے زیادہ لبنانی ہیں جن میں تارکین وطن اور وہاں پیدا ہونے والے شامل ہیں۔ پیراگوائے کے لبنانی نژاد نئے صدر ماریو نے 1989ء میں فوج میں شمولیت اختیار کی اور پھر فضائیہ میں ریزرو لیفٹننٹ کے عہدے پر فوج چھوڑ دی۔ بعد ازاں وہ امریکا میں تعلیم حاصل کرنے کے لیے چلے گئے۔ انہوں نےTelkyo Post کی نجی یونیورسٹی سے مارکیٹنگ میں گریجویشن کیا۔ انہوں نے اپنی پہلی اہلیہ فاطمہ دياس (عرب نژاد) کو طلاق دے دی جس نے ان کے دو بیٹے ہیں۔ ان کی حالیہ اہلیہ کا نام سيلفانا لوبس موريرا ہے۔