.

عراق کی سرحد کے نزدیک واقع ایرانی صوبے کرمان شاہ میں 5.2 کی شدت کا زلزلہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق کی سرحد کے نزدیک واقع ایران کے مغربی صوبے کرمان شاہ میں 5.2 کی شدت کا زلزلہ آیا ہے ۔فوری طور پر اس سے کسی جانی یا مالی نقصان کی کوئی اطلاع نہیں ہے۔

ایران کے زلزلہ پیما مرکز کی اطلاع کے مطابق اس بھونچال کا مرکز سمر شہر سے 22 کلومیٹر جنوب میں تھا اور اس کی گہرائی 10 کلومیٹر تھی ۔کرمان شاہ کے گورنر ہوشنگ بازوند نے سرکاری ٹی وی کو بتایا ہے کہ ’’ اللہ کا شکر ہے، اب تک کسی مالی یا جانی نقصان کی کوئی اطلاع موصول نہیں ہوئی ہے‘‘۔

ایران کا یہ صوبہ اور اس سے ملحقہ علاقے گذشتہ ہفتوں کے دوران میں شدید بارشوں کے بعد سیلاب کی زد میں رہے ہیں اور پورے پورے شہر اور دیہات زیر آب آگئے تھے۔ سیلاب کی تباہ کاریوں کے نتیجے میں 40 افراد ہلاک ہوگئے تھے۔

صوبہ کرمان شاہ کے اسی علاقے میں نومبر 2017ء میں بھی شدید زلزلہ آیا تھا ۔ریختر اسکیل پر اس زلزلے کی شدت 7.3 تھی۔اس کے نتیجے میں 620 افراد ہلاک ہوگئے تھے۔اس زلزلے سے ہمسایہ ملک عراق میں بھی آٹھ افراد مارے گئے تھے۔ کرمان شاہ میں گذشتہ سال جولائی میں 5.9 کی شدت کے زلزلےکے نتیجے میں کم سے کم 130 افراد زخمی ہوگئے تھے ۔

واضح رہے کہ ایران بڑی فالٹ لائن پر واقع ہے اور یہاں تھوڑے تھوڑے وقفے سے ہلکے اور زیادہ شدت کے زلزلے آتے رہتے ہیں۔2003ء میں 6.6 کی شدت کے زلزلے سے ایران کا تاریخی شہر بام ملیا میٹ ہوگیا تھا اور 31 ہزار سے زیادہ افراد مارے گئے تھے۔ایران کے شمالی علاقے میں 1990ء میں سب سے تباہ کن زلزلہ آیا تھا اور 7.4 کی شدت کے زلزلے سے 40 ہزار سے زیادہ افراد مارے گئے تھے، کم سے کم تین لاکھ زخمی ہوگئے تھے اور پانچ لاکھ افراد مکانات تباہ ہونے سے بے گھر ہوگئے تھے۔