.

روس شام میں ترکی کے محفوظ زون سے متعلق اقدام کو باریک بینی سے دیکھ رہا ہے: کریملن

ترکی کو اپنے دفاع کا حق حاصل ہے مگر شام کی علاقائی خود مختاری کا تحفظ کیا جانا چاہیے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

کریملن نے واضح کیا ہے کہ روس شام کے شمال مشرقی علاقے میں ترکی کے محفوظ زون کے قیام سے متعلق اقدامات کو باریکی بینی سے دیکھ رہا ہے۔اس نے یہ بیان ترک صدر رجب طیب ایردوآن کے اس اعلان کے بعد جاری کیا ہے جس میں انھوں نے کہا ہے کہ اگر دوسرے ممالک شام میں محفوظ زون کے قیام کے لیے کوئی اقدام نہیں کرتے تو وہ تنہا ہی یہ کام کرے گا۔

صدر ایردوآن نے منگل کے روز کہا تھا کہ ترکی کے پاس یک طرفہ اقدام کے سوا کوئی چارہ کار ہی نہیں رہ گیا ہے کیونکہ ’’ محفوظ زون‘‘ کے قیام کے لیے امریکا کے ساتھ کوئی پیش رفت نہیں ہوسکی ہے۔انھوں نے ایک طرح سے واضح لفظوں میں سرحد پار شامی علاقے میں ترکی کی ایک اور کارروائی کا اشارہ دیا ہے۔

کریملن کے ترجمان دمتری پیسکوف نے بدھ کو ماسکو میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ’’ترکی کو اپنے دفاع کا حق حاصل ہے لیکن شام کی علاقائی خود مختاری کا تحفظ کیا جانا چاہیے۔‘‘