.

تیونس کے سابق صدر کا سیاست سے کنارہ کش ہونے کا اعلان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

تیونس کے ایک سابق صدر المنصف المرزوقی نے آخر کار سیاسی زندگی اور پارٹی سے کنارہ کشی کا اعلان کر دیا۔ وہ کئی برس تک سیاسی اور قانونی سرگرمیوں میں حصہ لیتے رہے۔ اس دوران انہوں نے ریاست میں کئی اعلی منصبوں کو سنبھالا۔

اتوار کی شام المرزوقی نے اپنے فیس بک پیج پر تیونس کے عوام کے لیے اپنے آخری خطاب میں سبک دوشی کے فیصلے کو حالیہ صدارتی اور پارلیمانی انتخابات میں ناکامی کے ساتھ وابستہ کیا۔

واضح رہے کہ انتخابات میں المرزوقی کی جماعت "موومنٹ پارٹی" پارلیمنٹ میں نشستیں حاصل کرنے میں کامیاب نہ ہو سکی۔

المرزوقی نے مزید کہا کہ "میں نے حالیہ انتخابات کے نتائج کی پوری ذمے داری قبول کرتے ہوئے موومنٹ پارٹی کی سربراہی اور قومی سیاست کے میدان سے دست بردار ہونے کا فیصلہ کیا ہے۔ البتہ دیگر طریقوں سے مختلف شعبوں میں قوم کی خدمت کا سلسلہ جاری رکھوں گا"۔

یاد رہے کہ 74 سالہ المرزوقی 2011 کے اواخر میں تیونس کے صدر چُنے گئے تھے۔

حالیہ صدارتی انتخابات میں قیس سعید کے مقابل ان کی بڑی شکست نے سیاست کے پنڈتوں کو حیران کر دیا۔ سال 2014 میں المرزوقی صدارتی انتخابات میں جیت کے بہت قریب آ گئے تھے تاہم مرحوم صدر الباجی قائد السبسی نے میدان مار لیا۔