یمن اور حوثی

سعودی، عمانی وفد حوثیوں سے مذاکرات کے لیے اگلے ہفتے یمن جائے گا: ذرائع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی اور عمانی وفد یمن میں حوثی باغیوں کے ساتھ جنگ بندی پر بات چیت کے لیے اگلے ہفتے یمن کے دارالحکومت صنعا روانہ ہوگا۔

مذاکرات میں شامل دو اہم ذرائع نے بتایا کہ سعودی-عمانی وفد حوثی حکام سے ملاقات کرےگا تاکہ یمن میں مستقل جنگ بندی کا معاہدہ کیا جا سکے اور آٹھ سالہ خانہ جنگی کو ختم کیا جا سکے۔

ذرائع نے بتایا کہ اگر مذاکرات کامیاب ہوجاتے ہیں تو یمن کے متحارب فریق 20 اپریل سے شروع ہونے والی عید الفطر کی تعطیلات سے قبل کسی معاہدے کا اعلان کر سکتے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ بات چیت یمن کی بندرگاہوں اور ہوائی اڈوں کو دوبارہ مکمل طور پر کھولنے، سرکاری ملازمین کے لیے اجرتوں کی ادائیگی، تعمیر نو کے عمل اور سیاسی منتقلی جیسے موضوعات پر مرکوز ہوگی۔

یمن کی بین الاقوامی سطح پر تسلیم شدہ حکومت نے کہا کہ عرب اتحاد کی طرف سے یمن کی جنوبی بندرگاہوں کے لیے درآمدات پر آٹھ سال پرانی پابندیاں ہٹانا اس سلسلے میں پیشرفت کی جانب اہم اشارہ ہے۔

فروری میں حوثیوں کے زیر قبضہ مغربی بندرگاہ الحدیدہ میں داخل ہونے والے تجارتی سامان پر پابندیوں میں نرمی کی گئی جو ملک کی اہم بندرگاہ ہے۔

یمنی حکومت نے جمعرات کو کہا کہ تجارتی بحری جہازوں کو عدن سمیت جنوبی بندرگاہوں پر براہ راست جانے کی اجازت ہوگی اور کچھ استثناء کے ساتھ تمام سامان کو کلیئر کر دیا جائے گا۔ 2015 کے بعد سے یہ پہلی ایسی پیش رفت ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں