پینٹاگون کی دستاویز پھیلانے میں امریکی خاتون فوجی کا اکاؤنٹ مدد گار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

پینٹاگون کی خفیہ دستاویزات کو لیک کرنے کا معاملہ امریکیوں اور دنیا کی توجہ کا مرکز بنا ہوا ہے۔ جیک تشیرا کی گرفتاری کے بعد اس حوالے سے دستایز کی اشاعت کے حوالے سے نئے حقائق اور معلومات سامنے آئی ہیں۔ معلومات سے پتہ چلتا ہے کہ امریکی بحریہ میں ایک سابق نان کمیشنڈ خاتون افسر کے زیر نگرانی ایک سوشل میڈیا اکاؤنٹ نے مبینہ طور پر فرسٹ پائلٹ جیک تشیرا کی طرف سے لیک کی گئی انٹیلی جنس دستاویزات کے پھیلاؤ میں اہم کردار ادا کیا ہے۔

وال سٹریٹ جرنل نے بتایا ہے کہ ایک روسی بلاگر جو ’’ڈونباس ڈیووشکا‘‘ کے نام سے معروف ہے نے غیر واضح آن لائن چیٹ رومز سے فائلیں دوبارہ پوسٹ کی ہیں۔ ’’ڈونباس ڈیووشکا‘‘ کا معنی ’’ ڈونباس کی لڑکی‘‘ ہے۔ یہ بلاگ یوکرین کی جنگ میں کریملن کے وفاداروں کے لیے سوشل میڈیا اکاؤنٹس، پوڈ کاسٹ اور فنڈ ریزرز کے نیٹ ورک کا ایک محاذ ہے۔

سابق خاتون امریکی فوجی خاتون کا سوشل میڈیا اکاؤنٹ

لیکن وہ شخص جو پوڈ کاسٹ کی ’’ڈونباس ڈیووشکا‘‘ کے طور پر میزبانی کرتا اور ان اکاؤنٹس کی نگرانی کرتا ہے وہ واشنگٹن میں مقیم ایک سابق امریکی خاتون ایویونکس ٹیکنیشن ہے جس کا اصل نام سارہ بیلز ہے۔

37 سالہ سارہ بیلزنے گزشتہ سال کے آخر تک جزیرے ’’ویدبے‘‘پر یو ایس نیول ایئر سٹیشن میں کام کیا ہے۔ اس کے بنائے گئے اکاؤنٹس نے روسی فوج اور روسی نیم فوجی گروپ ’’ویگنر‘‘ کی تعریف کی تھی۔

سارہ بیلز جن اکاؤنٹس کی نگرانی کرتی ہیں ان میں سب سے زیادہ فالو کیے جانے والے انگریزی زبان کے سوشل میڈیا اکاؤنٹ پر روس کے خیالات کو فروغ دیا جاتا ہے۔ ہفتہ کو ایک انٹرویو میں سارہ بیلز نے کہا کہ وہ صفحہ چلاتی ہیں اور اس نام سے فنڈ ریزنگ اور پوڈ کاسٹ کی میزبانی کا اعتراف کرتی ہیں۔

سارہ نے مزید کہا کہ وہ دنیا بھر کے ان 15 افراد میں سے ایک تھی جو ’’ڈونباس ڈیووشکا‘‘ نیٹ ورک کے انتظام میں شامل تھے۔ تاہم سارہ نے مزید افراد کی شناخت کرنے سے انکار کر دیا۔

خفیہ دستاویزات شائع

وال سٹریٹ جرنل کی طرف سے دیکھے گئے سکرین شاٹس کے مطابق 5 اپریل کو ٹیلی گرام اکاؤنٹ نے مبینہ طور پر اپنے 65 ہزار پیروکاروں کے لیے لیک لیک ہونے والی 4 خفیہ دستاویزات پوسٹ کیں۔ کئی روسی سوشل میڈیا اکاؤنٹس نے دستاویزات اٹھا لیں۔ جس کے بعد پینٹاگون نے تحقیقات کا آغاز کیا۔ سارہ بیلز کا کہنا ہے کہ ایک اور منتظم نے یہ چار فائلیں پوسٹ کی ہیں۔ اس بات کا کوئی ثبوت نہیں ہے کہ سارہ بیلز جنہوں نے بحریہ میں خدمات انجام دیتے ہوئے سیکیورٹی کلیئرنس حاصل کی تھی نے اس رسائی کا استعمال خود کسی بھی خفیہ معلومات کو چرانے کے لیے کیا تھا۔

سارہ بیلز
سارہ بیلز

جیک تیشیرا کی پوسٹیں مہینوں سے آن لائن تھیں، یہ پوسٹیں ساتھی کمپیوٹر گیمرز کے ایک چھوٹے سے حلقے میں شیئر کی گئیں جو اس کے صرف دعوت نامے والے ڈسکورڈ سرور میں شامل تھے۔ یہاں تک کہ ایک اور رکن نے فائلوں کو ایک بڑے ڈسکورڈ (Discord) سرور پر دوبارہ پوسٹ کیا تو پھر بھی یہ دستاویز عوام کے دھیان میں نہیں آئیں۔

تاہم ’’ڈونباس ڈیووشکا‘‘ کے اکاؤنٹ پر کچھ فائلیں شائع کرنے کے بعد یہ انٹرنیٹ پر فوج کے شائقین اور روس کے حامیوں کے لیے ایک بھرپور مواد بن گیا۔ اس کے بعد سے اب تک درجنوں دیگر کلاسیفائیڈ فائلیں ڈسکورڈ پر پائی گئی ہیں جن میں سے زیادہ تر یوکرین کی جنگ سے متعلق ہیں لیکن ان میں دوسرے ملکوں کے متعلق مختلف راز بھی موجود ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں