روسی سیاح کو کھانے والی شارک سے لڑائی کرتے مصری ماہی گیر کی ویڈیو وائرل، حقیقت کیا ہے

سوشل میڈیا پیجز پر یہ ویڈیو 2019 میں پبلش ہو چکی، روسی سیاح پر حملہ آور شارک کو پکڑنے کا دعویٰ کرنیوالی ویڈیو غلط ثابت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مصر میں الغردقہ کے ساحل پر شارک کے حملے میں ایک روسی کی ہلاکت کے بعد سوشل میڈیا صارفین نے ایک ویڈیو پھیلا دی ہے جس کے پبلشرز نے دعویٰ کیا کہ اس میں ایک نوجوان کو پانی میں چھلانگ لگا کر اس شکاری مچھلی کو پکڑتے ہوئے دکھایا گیا ہے جس نے روسی سیاح کو نگل لیا تھا۔ لیکن جائزہ لینے اور تحقیقات سے معلوم ہوتا ہے کہ یہ دعویٰ درست نہیں کیونکہ یہ ویڈیو تو برسوں پہلے ہی انٹرنیٹ پر وائرل ہوگئی تھی۔ اس ویڈیو کا حالیہ واقعہ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

ویڈیو میں دکھایا گیا ہے کہ ایک نوجوان سمندر میں ایک کشتی سے چھلانگ لگاتا ہے پھر ایک چیز پکڑتا ہے جو ایک بڑی مچھلی ہوتی ہے۔ اس ویڈیو پر کئے گئے تبصروں میں کہا گیا ہے کہ ویڈیو میں وہ لمحہ دکھایا گیا ہے جب ایک مصری ماہی گیر نے الغردقہ میں شارک کو پکڑ لیا تھا۔

اس تناظر میں اس پوسٹ کا ظہور آٹھ جون کو بحیرہ احمر کے نظارے والے مصری شہر الغردقہ کے ساحل پر شارک کے حملے میں ایک نوجوان روسی شخص کی موت کے بعد ہوا ہے۔

ماحولیات کی وزارت نے کہا کہ اس کی خصوصی ٹیموں نے مشاہدے میں آنے والے شارک کے غیر معمولی رویے کی روشنی میں حادثہ کا سبب بننے والی مچھلیوں کوپکڑ لیا ہے۔

اس تناظر میں یہ ویڈیو پھیلا دی گئی اور کہا گیا کہ اس ویڈیو میں ایک مصری مچھیرے کو شارک پکڑتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔ سرچ انجنز پر اسے تلاش کرنے سے پتہ چلتا ہے کہ یہ ویڈیو برسوں پہلے شائع ہوئی تھی۔ تحقیقات سے ویڈیو پبلش کرنے والے کے دعویٰ کی بھی تردید ہوگئی ہے۔

واضح رہے یہ ویڈیو 2019 میں سوشل میڈیا پیجز پر مختلف تبصروں کے ساتھ پہلے سے موجود ہے۔ اے ایف پی کے صحافیوں کے لیے ویڈیو کے حالات کی تصدیق کرنا ممکن نہیں تھا۔ تاہم 2019 میں اس کی اشاعت اس بات کی تردید کرتی ہے کہ یہ حالیہ ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں