افغانستان: ہوٹل میں دھماکا، تین افراد ہلاک، سات زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

افغانستان کے جنوب مشرقی صوبہ خوست میں ایک ہوٹل میں دھماکے میں تین افراد ہلاک اور سات زخمی ہو گئے ہیں۔

فوری طور پر یہ واضح نہیں ہوسکا کہ اس دھماکے کے پیچھے کس کا ہاتھ کارفرما ہے۔پاکستان کی سرحد کے قریب واقع یہ علاقہ طویل عرصے سے عسکریت پسندوں اور ان کے مخالفین کے درمیان تشدد کا شکار رہا ہے۔

خوست کے میڈیا آفس کا کہنا ہے کہ ہلاک ہونے والوں میں پاکستان کے علاقے وزیرستان سے تعلق رکھنے والے افراد بھی شامل ہیں جو سرحد کے بالکل قریب ہے اور جہاں گذشتہ کئی سال سے مختلف جنگجو گروہ سرگرم ہیں۔

افغانستان میں طالبان کی انتظامیہ کو شدت پسند گروپ دولت اسلامیہ (داعش) کے دہشت گردوں کی جانب سے شورش کا سامنا ہے۔انھوں نے حالیہ مہینوں میں شہریوں، غیر ملکیوں اور طالبان سکیورٹی فورسز کو تباہ کن حملوں میں نشانہ بنایا ہے اور متعدد مہلک حملوں کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

دریں اثنا، پاکستان میں ریاست کے خلاف لڑنے والے طالبان جنگجوؤں کی طرف سے تشدد میں اضافہ دیکھا گیا ہے اورپاکستان کی قیادت نے شکایت کی ہے کہ افغانستان کے طالبان اپنی سرزمین پر جنگجوؤں کو دبانے کے لیے کافی کام نہیں کر رہے ہیں۔

دوسری جانب طالبان کا کہنا ہے کہ ان کی توجہ افغانستان کو محفوظ بنانے پر مرکوز ہے اور حالیہ مہینوں میں انھوں نے داعش کے ٹھکانوں کے خلاف کئی چھاپامار کارروائی کی ہیں۔

اقوام متحدہ کے مطابق اگست 2021 میں غیر ملکی افواج کے افغانستان سے انخلا اور طالبان کے اقتدار پر قبضہ کرنے کے بعد سے بم دھماکوں اور دیگر تشدد میں ایک ہزار سے زیادہ افغان شہری ہلاک ہو چکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں