ارجنٹائن کے نومنتخب صدر نے مراکشی نژاد یہودی ربی کو اسرائیل میں سفیر مقرر کر دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

ارجنٹائن کے نئے صدر جیویر ملے نے کل بدھ کو ایک یہودی مذہبی رہ نما [ربی] کو اسرائیل میں ارجنٹائن کا نیا سفیر مقرر کیا ہے حالانکہ اس کا کوئی سفارتی تجربہ نہیں ہے۔

چالیس سالہ مراکشی نژاد شیمون ایکسل واہنش کو تل ابیب میں اسرائیل کے لیے سفیر مقرر کیا گیا ہے جس سے ان کی پسندیدگی اور اسرائیل کے لیے ہمدردی کا ایک نیا اشارہ ملتا ہے۔ انہوں نے الیکشن مہم کے دوران یہودی مذہب اور اسرائیل کے لیے اپنی مکمل حمایت کا اعلان کیا تھا۔ انہوں نے اپنے ووٹروں سے وعدہ کیا تھا کہ صدر منتخب ہونے کے بعد وہ اسرائیل میں اپنا سفارت خانہ یروشلم منتقل کریں گے۔

یہ عہدہ گزشتہ سال اپریل سے برقرار تھا جب اس پر فائز رہنے والے آخری شخص کو بدعنوانی کا مرتکب ٹھہرایا گیا اور اس نے استعفیٰ دے دیا۔

’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ نے ارجنٹائن کے متعدد ذرائع ابلاغ کے حوالے سے بتایا کہ نئے سفیر بھی تورات کے استاد ہیں تاہم اسرائیلی وزارت خارجہ کو ابھی تک اس کی تقرری کی باضابطہ اطلاع موصول نہیں ہوئی ہے۔

عبرانی زبان پر عبور رکھنے والے یہودی ربی وینش کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ انہوں نے جیویر ملے کو یہودی مذہب کے قریب لانے میں اہم ادا کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں