سعودی عرب ابھی 'برکس' میں شامل نہیں ہوا: وزیر تجارت ماجد القصبی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

سعودی عرب کی طرف سے کہا گیا ہے کہ اس نے ابھی تک باضابطہ طور پر 'برکس' نامی تنظیم میں شمولیت اختیار نہیں کی ہے۔ یہ بات سعودی وزیر تجارت نے ڈیووس ایڈیشن 24 کے دوران ایک پینل سے گفتگو کرتے ہوئے بتائی ہے۔

سعودی وزیر ماجد القصبی کا کہنا تھا 'ہم نے ابھی تک باقاعدہ طور پر 'برکس' میں شمولیت اختیار نہیں کی ہے۔ اگرچہ ہمیں شمولیت کی دعوت دی گئی تھی۔ واضح رہے یکم جنوری کی 'برکس' میں شمولیت کی ڈیڈ لائن گذرنے کے بعد کسی سعودی ذمہ دار کا 'برکس' کے بارے میں یہ موقف پہلی بار سامنے آیا ہے۔

اس سے قبل یکم جنوری کو سعودی عرب کے سرکاری ٹی وی نے یہ خبر دی تھی کہ مملکت نے 'برکس' جوائن کر لی ہے۔ بعد ازاں سوشل میڈیا اکاؤنٹس سے اس پورٹ کو ہٹانے کا کہا گیا تھا۔

یاد رہے 'برکس' نامی تنظیم کے ارکان میں برازیل، روس، چین، بھارت اور جنوبی افریقہ شامل ہیں۔ جبکہ نے سعودی عرب، متحدہ عرب امارات، مصر، ایران، ارجنٹائن اور ایتھوپیا کو اگست میں شمولیت کی دعوت دی تھی، ارجنٹائن نے اس دعوت کو قبول نہ کرنے کا اشارہ دیا ہے۔

سعودی عرب کو ملنے والی 'برکس' میں شمولیت کی دعوت کو امریکہ اور چین کے درمیان بڑھتے ہوئے تناؤ کے پس منظر بھی دیکھا گیا تھا۔ کیونکہ چین کے ساتھ سعودی عرب کے گرم جوشی والے تعلقات نے واشنگٹن میں تحفظات پیدا کیے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں