امریکی اور برطانوی فضائی حملے یمن کی بندرگاہ کو نشانہ بنا رہے ہیں: حوثی ٹی وی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

حوثیوں کے المسیرہ ٹیلی ویژن نے ہفتے کے روز کہا کہ امریکا اور برطانیہ نے یمن کے تیل برآمد کرنے والے اہم ٹرمینل راس عیسیٰ کی بندرگاہ کو نشانہ بنانے کے لیے دو فضائی حملے کیے ہیں۔

مزید تفصیلات فوری طور پر میسر نہیں ہیں۔

یہ فضائی حملے ایسے وقت میں کیے گئے جب یمن کے حوثی باغیوں نے بحیرۂ احمر سے گذرنے والے بحری جہازوں پر حملے تیز کر دیے ہیں جس میں جمعہ کے روز ایک ایندھن کے ٹینکر کو آگ لگنے کا واقعہ بھی شامل ہے۔

امریکی فوج نے کہا کہ ٹینکر مارلن لوانڈا جو تجارتی فرم ٹریفیگورا کی جانب سے کام کر رہا تھا، کو نقصان پہنچا لیکن کوئی زخمی نہیں ہوا اور امریکی بحریہ کا ایک جہاز مدد فراہم کر رہا تھا۔

سینٹرل کمانڈ نے ایک پوسٹ میں کہا کہ تقریباً آٹھ گھنٹے بعد امریکی فوج نے حوثیوں کے ایک جہاز شکن میزائل کو تباہ کر دیا جس کا مقصد بحیرۂ احمر میں حملہ کرنا تھا اور وہ لانچ کرنے کے لیے تیار تھا۔

ایران سے منسلک حوثیوں نے غزہ میں اسرائیل کی فوجی کارروائیوں کے جواب میں 19 نومبر سے جہازوں پر ڈرون اور میزائل حملون کا سلسلہ شروع کر رکھا ہیں۔

ان حملوں میں بنیادی طور پر بحیرۂ احمر سے گذرنے والے کنٹینر جہازوں کو نشانہ بنایا گیا ہے۔ بہت سے آئل ٹینکر اسی راستے کو استعمال کرتے رہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں