برطانوی وزیراعظم رشی سوناک کو بچپن میں ’بھارتی نژاد‘ ہونے کا طعنہ سننا پڑا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

برطانوی وزیراعظم رشی سوناک نے کہا ہے کہ انہیں بچپن میں برطانیہ میں نسل پرستی کا سامنا کرنا پڑا تھا۔ انہوں نے بتایا کہ ان کے والدین نے کس طرح مصمم ارادے کے ساتھ "بغیر لہجے کے" بولنا سکھانے کی کوشش کی۔

اخبار ’گارڈین‘ کے مطابق سوناک نے ’آئی ٹی وی‘ نیوز کی ڈپٹی پولیٹیکل ایڈیٹر انوشکا استھانہ کو بتایا کہ "آپ کو احساس ہے کہ آپ مختلف ہیں۔ایسا نہ ہونا مشکل ہے۔ ٹھیک ہےاور ظاہر ہے کہ میں نے بچپن میں نسل پرستی کا تجربہ کیا تھا"۔

استھانہ کو آنے والے پروگرام رشی سوناک اپ کلوز ٹونائٹ میں وزیر اعظم کا انٹرویو لینے کا موقع دیا گیا۔

توہین آمیزباتیں

سوناک اپنے چھوٹے بہن بھائیوں کی توہین سننے کے درد کو یاد کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ نسل پرستی اس طرح تکلیف دیتی ہے۔ دوسری چیزیں نہیں کرتی ہیں۔انہیں لگتا ہے کہ انہوں نے جو تجربہ کیا وہ اب ان کے بچوں کے ساتھ نہیں ہوگا۔

اپنے ہندوستانی نژاد کے ہونے کے بارے میں بات کرتے ہوئے سوناک نے کہا کہ ان کے والدین اس کے اور اس کے بہن بھائیوں کو متحد کرنے کے خواہشمند تھے۔ یہ کسی بھی طرح سے رکاوٹ نہ بنے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ان کی والدہ خاص طور پر اپنے بچوں کے بولنے کے اندازسے واقف تھیں۔ میری والدہ کو جن چیزوں کا جنون تھا ان میں سے ایک یہ تھی کہ ہم مختلف لہجوں کے ساتھ بات نہیں کرسکتے تھے۔ وہ چاہتی تھیں کہ ہم صحیح بول سکیں۔ اس لیے وہ ہمارے لیے ڈرامے کے اضافی سبق لینے کی خواہشمند تھیں"۔

نسل پرستی کی شکلیں

انہوں نے کہا کہ "میرے خیال میں نسل پرستی کی کوئی بھی شکل محض ناقابل قبول ہے"۔ انہوں نے کہا جب وہ عالمی رہ نماؤں سے بات کرتے ہیں، زیادہ تر لوگ برطانیہ کو اس کی مثال کے طور پر دیکھتے ہیں کہ اسے کیسے درست کیا جائے۔

سوناک نے اعتراف کیا کہ انہوں نے کبھی خواب میں بھی نہیں سوچا تھا کہ ایک دن ایک نسلی اقلیت سے وزیر اعظم ہوگا کیونکہ ان کے پاس ایسا کوئی رول ماڈل نہیں تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں