غزہ میں جنگ بندی مذاکرات، فرانسیسی وزیر خارجہ کا اچانک مصر کا دورہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مشرق وسطیٰ کے دورے کے دوران ایک غیر طے شدہ اسٹاپ میں اسرائیل اور حماس کے درمیان غزہ میں جنگ بندی کے معاہدے تک پہنچنے کی کوششوں کے جلو میں فرانسیسی وزیر خارجہ اسٹیفن سیگورنی آج بدھ کو قاہرہ جائیں گے۔

غیراعلانیہ دورہ

ایک فرانسیسی سفارتی ذریعے نے رائیٹرز کو بتایا کہ کہا "وزیر خارجہ کا اچانک دورہ غزہ میں یرغمالیوں کی رہائی اور جنگ بندی تک پہنچنے کے لیے مصری کوششوں کے فریم ورک کا حصہ ہے"۔

سات اکتوبر کو اسرائیل پر حماس کے حملے کے بعد سے تین فرانسیسی شہری اب بھی حماس کے ہاتھوں یرغمال ہیں۔

معاہدے تک پہنچنے کی رفتار

سیگورنی جنہوں نے یروشلم میں اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو سے ملاقات کی منگل کے روز رائیٹرز کے ساتھ ایک انٹرویو میں کہا تھا کہ معاہدے تک پہنچنے کی طرف رفتار تیز ہوئی ہے لیکن یہ معاہدہ طویل مدتی جنگ بندی کی طرف پہلا قدم ہو گا۔

انہوں نے خبردار کیا کہ جنوبی غزہ کے شہر رفح پر حملہ اسرائیل کو حماس کے خلاف جنگ میں مدد نہیں دے گا۔

فرانسیسی وزیر خارجہ مصر کے دورے سے قبل لبنان، سعودی عرب اور اسرائیل کے دورے پرآئے۔

وہ ممکنہ طور پر اس بات کا جائزہ لینے کی کوشش کریں گے کہ آیا تینوں یرغمالیوں کو رہا کیا جا سکتا ہےیا نہیں اور معاہدہ حقیقت میں کتنا قریب ہے۔

قابل ذکر ہے کہ مصر کی تجویز میں کہا گیا تھا کہ حماس غزہ میں یرغمال بنائے گئے چالیس افراد کو رہا کرے جس کے بدلے میں غزہ میں چھ ہفتے کی جنگ بندی عمل میں لائی جائے۔اس کے بعد جنگ بندی کی توسیع کے لیے ہر قیدی کے بدلے ایک نئے دن کی جنگ بندی کی تجویز شامل ہے۔

تاہم اگرحماس 20 سے زیادہ اسرائیلی زیر حراست افراد کو رہا نہیں کرتی ہے تو اس مدت کو مختصر کیا جا سکتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں