مصری نژاد ڈونر کی جوبائیڈن کو یہودی ووٹوں سے محروم کرنے کی دھمکی

اسرائیل کو مہلک ہتھیاروں کی کھیپ روکنےپر اسرائیل نواز حلقے ناراض

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکی صدر جوبائیڈن کی جانب سے اسرائیل کو اسلحے کی کھیپ روکنے کے اعلان کے بعد اسرائیلی حکومت اور امریکہ کے اندر سے اسرائیل نواز شخصیات نے صدر کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔
اقوام متحدہ میں اسرائیلی سفیر گیلاد اردان نے تو یہاں تک کہہ دیا کہ اسرائیل کو اسلحہ روکنے کے فیصلے پر ان کا ملک خاموش نہیں رہے گا۔

جوبائیڈن کے اس فیصلے پر ناراض ہونے والوں میں ایک مصری نژاد عرب پتی یہودی بھی شامل ہیں جنہوں نے امریکی یہودیوں کو مشورہ دیا ہے کہ وہ نومبرمیں ہونے والےصدارتی انتخابات میں جوبائیڈن کے حق میں ووٹ دینے سے گریز کریں۔

بڑے ڈیموکریٹک عطیہ دہندہ حاییم سابان نے بائیڈن کے معاونین اسٹیو رِچیٹی اور انیتا ڈن کو ایک ای میل بھیجی جس میں امریکی صدرکی طرف سے اسرائیل کو اسلحے کی ترسیل کو معطل کرنے کے فیصلے پر تبصرہ کیا۔

اس کے معاونین کو پیغام

انہوں نے مذکورہ بالا مکتوب میں لکھا کہ ’’ہمیں یہ نہیں بھولنا چاہیے کہ اسرائیل کا خیال رکھنے والے یہودی ووٹروں کی تعداد ان مسلم ووٹروں کی تعداد سے زیادہ ہے جو حماس کا خیال رکھتے ہیں‘‘۔ ان کا اشارہ الیکشن میں ڈیموکریٹک پارٹی کے ممکنہ مسلمان ووٹروں کی طرف تھا۔

انہوں نے سوشل میڈیا پر گذشتہ چند گھنٹوں کے دوران پھیلنے والے پیغام کے متن میں کہا کہ واشنگٹن حماس کو شکست دینے کی ضرورت پر قائم ہے

بہت برا فیصلہ

سابان نے کہا کہ صدر جوبائیڈن کی جانب سے اسرائیل کو اسلحہ کی ترسیل روکنے کا فیصلہ اپنے اتحادیوں کو نقصان پہنچانے کے مترادف ہے۔ یہ اس بات کا اشارہ ہے کہ امریکہ دباؤ کا شکار ہو سکتا ہے اور صحیح کام کرنے کے بجائے اپنی پوزیشن تبدیل کر سکتا ہے۔
انہوں نے کہا کہ یہ بہت برا اور غلط فیصلہ ہے۔ میری درخواست ہے کہ اسرائیل کو اسلحہ کی سپلائی معطل کرنے کے فیصلے پر نظرثانی کی جائے۔

 حاييم سابان

یہ بات اس وقت سامنے آئی جب اسرائیلی مندوب نے گذشتہ روز اسرائیلی نشریاتی ادارے کے ساتھ ایک انٹرویو میں کہا تھا "یہودی اب امریکی انتخابات میں ڈیموکریٹک پارٹی کو ووٹ دینے سے ہچکچا رہے ہیں"۔

سابان نے گذشتہ فروری میں بیورلی پارک میں اپنے گھر پر بائیڈن کے لیے ایک فنڈ ریزر کی مشترکہ میزبانی کی تھی، حالانکہ وہ کووِڈ ٹیسٹ کا مثبت نتیجہ آنےکے بعد خود اس ایونٹ میں شرکت نہیں کرسکے تھے۔

قابل ذکر ہے کہ سابان ایک عالمی کاروباری اور سرمایہ کار ہیں جن کے پاس میڈیا کمپنیوں کی تعمیر کا چار دہائیوں سے زیادہ کا تجربہ ہے وہ لاس اینجلس میں واقع ایک عالمی نجی سرمایہ کاری فرم سابان کیپیٹل ایل ایل سی کے چیف ایگزیکٹو ہیں۔

وہ مصر کے شہر اسکندریہ میں پیدا ہوئے اوران کا خاندان بہت پہلے امریکہ منتقل ہوگیا تھا تب سابان کی عمر صرف بارہ سال تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں