.

سعودی عرب: شادی زیورات خریدنے پر سالانہ دو ارب ریال صرف

شادی سیزن کا رحجان صرافہ بازار میں سونے کی قیمت کے تعین پر اثر انداز ہوتا ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب میںخواتین عروسی تقریبات اور شادی بیاہ کے لیے سالانہ دو ارب ریال کا سونا اور ہیرے جواہرات خرید کرتی ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق مملکت میں سالانہ شادی کی تقریبات پر خرچ ہونے والی رقم کی دوگنا قیمت سے عورتیں اپنے لیے زیورات خرید کر لیتی ہیں۔ شادی کی تقریبات پر مجموعی طور پر سالانہ ایک ارب ریال کی رقم صرف ہوتی ہے جبکہ خواتین صرف جیولری پر دو ارب ریال کی رقم پھونک دیتی ہیں۔

رپورٹ کے مطابق سعودی خواتین کی زیورات کی خریداری سے متعلق یہ تازہ رپورٹ ریاض میں "ہمارا دلہا 2014" کے عنوان سے جاری ایک نمائش کے دوران سامنے آئی ہے۔ تین روزہ عروسی نمائش میں شادی بیاہ سے متعلق اشیاء زیورات، ہیرے جواہرات، دیسی، ولایتی عروسی ملبوسات، میک اپ کا سامان اور عطریات شامل ہیں۔

نمائش کی میڈیا کوآرڈینیٹر نورہ ناصر نے بتایا کہ شادی بیاہ پر اخراجات کے حوالے سے سعودی شہری فراخ دلی کا مظاہرہ کرتے ہیں، یہی وجہ ہے کہ سعودی عرب عروسی سامان کی دنیا کی سب سے بڑی مارکیٹ بن چکا ہے۔ یہاں پر روایتی طور پر لوگ شادیوں پر غیر معمولی ہیرے جواہرات اور زیورات خرید کرتے ہیں جس کا گولڈ مارکیٹ کے اتارو چڑھاؤ پر بھی براہ راست اثر پڑتا ہے۔

نورہ ناصر کا کہنا تھا کہ خلیجی ممالک میں شادی بیاہ کی تقریبات کے لیے سالانہ 700 ملین ڈالر کی جیولری خرید کی جاتی ہے۔ اس رقم کا نصف صرف عروسی جوڑے اور ان کے خاندان جیولری پر صرف کرتے ہیں۔