مکہ مکرمہ کی سڑکوں پر نیم عریاں شخص کی بدحواسیاں

خواتین اور بچے منظر دیکھ کر ہراساں ہوتے ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

سعودی عرب کے شہر مکہ مکرمہ کی شاہراہوں پر خواتین اور بچوں کو ہراساں کرنے والا نیم عریاں شخص ذہنی طور پر پس ماندہ نکلا۔

مقدس شہر سے شائع ہونے والے عرب روزنامے 'مکہ' کے مطابق محمد علی نامی نوجوان اپنے جسم کا دھڑ کسی چیز سے نہیں ڈھانپتا اس کے جسم کا نچلا حصہ بھی انتہائی باریک کپڑے میں تقریبا عریاں ہی دکھائی دیتا ہے۔

اپنے دانتوں میں سگریٹ دبائے وہ خود کلامی کرتا رہتا ہے، جبکہ اس کی عمومی حالت ذہنی طور پر منتشر انسان جیسی ہوتی ہے۔

وہ کہاں جا رہا ہے اور اس کا کیا نام ہے جیسے سوال کے جواب میں نیم مجذوب شخص اپنا تعارف محمد علی کے طور پر کراتا ہے اور سوال کرنے والے کو بتاتا ہے کہ وہ یہاں سے وہاں تک جا رہا ہے۔ وہ مستقل طور پر مکہ مکرمہ کی الشہداء شاہراہ پر گشت کرتا نظر آتا ہے۔

وہ پیدل چلنے والوں میں کسی پر حملہ آور نہیں ہوتا، تاہم اہل علاقہ اس سے خوفزدہ رہتے ہیں کیونکہ وہ اچانک مشتعل ہو جاتا ہے، اسی وجہ سے لوگ اس سے حتمی المقدور دور رہنے کی کوشش کرتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں