.

داعش کے خلاف فرانس کی شمولیت قابل تعریف ہے: اوباما

مشترکہ سلامتی اور اقدار کا مل کر تحفظ کریں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی صدر براک اوباما نے عراق میں داعش کے خلاف فضائی کارروائی میں امریکی فوج کے ساتھ فرانس کی شمولیت کے فیصلے کی تحسین کی ہے۔

امریکا نے ماہ اگست کے شروع میں ہی عراق میں داعش کے ٹھکانوں کو نشانہ بنانا شروع کیا تھا۔ جبکہ فرانس نے اس آپریشن میں حصہ لینے کا فیصلہ حالیہ ہفتے کے دوران کیا ہے۔

امریکی صدر نے وائٹ ہاوس میں خطاب کرتے ہوئے کہا '' امریکا داعش کے خلاف ایک وسیع ترعالمی اتحاد بنانے کے لیے کوشاں ہے، تاکہ دہشت گرد گروہ کو تباہ اور کمزور کیا جا سکے۔ ''

صدر اوباما کا کہنا تھا '' عراق میں داعش کے ٹھکانوں کو نشانہ بنانے میں اب فرانس بھی شامل ہو گا۔'' صدر اوباما نے یہ بات فرانس کی صدر سے براہ راست کنفرم کرنے کے بعد کہی ہے۔

امریکی صدر کا مزید کہنا تھا'' فرانس ہمارے قدیم ترین دوستوں میں سے ایک ہے، اس سے پہلے بھی دہشت گردی کے خلاف کوششوں میں فرانس ہمارا مضبوط شراکت دار رہا ہے، ہمیں خوشی ہے کہ امریکی اور فراسیسی فوجی ایک مرتبہ پھر اکٹھے ہوں گے تاکہ مشترکہ سلامتی اور مشترکہ اقدار کا تحفظ کر سکیں۔''

واضح رہے امریکا ان دنوں ابھرتی ہوئی عسکری طاقت داعش کے خلاف درجنوں ممالک کو ایک اتحاد میں شامل کر چکا ہے اور اس بارے میں مزید کوششیں جاری ہیں۔ اس اتحاد میں مشرق وسطی کے ممالک بھی شامل ہیں۔

اس صورتحال میں فرانس نے فوری طور پر عراق میں داعش کے خلاف فضائی کارروائیوں کی حامی بھری ہے۔ فرانس کا کہنا ہے کہ اس نے یہ فیصلہ عراق حکومت کی درخواست پر کیا گیا ہے۔