.

حزب اللہ کا 4 صہیونی فوجی ہلاک کرنے کا دعویٰ

اسرائیلی فوج نے 2 ہلاکتوں کی تصدیق کردی، حملے میں متعدد گاڑیاں تباہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیل کے مقبوضہ شامی علاقے گولان پر لبنان کی شیعہ ملیشیا حزب اللہ کے مارٹر بموں کے حملے میں دو اسرائیلی فوجی ہلاک اور کم سے کم دس زخمی ہوگئے ہیں جبکہ حزب اللہ نے چار صہیونی فوجیوں کی ہلاکت کا دعویٰ کیا ہے۔

اسرائیلی فوج نے لبنان کی سرحد کے نزدیک ٹینک شکن میزائل کے حملے میں دو فوجیوں کی ہلاکت اور سات فوجیوں کے زخمی ہونے کی تصدیق کی ہے۔ حزب اللہ کے المنار ٹی وی نے دعویٰ کیا ہے کہ گولان کی چوٹیوں پر واقع شبعا فارمز کے علاقے میں حملے میں اسرائیلی فوج کی نو گاڑیاں تباہ ہوگئی ہیں۔

الحدث ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق حزب اللہ نے اسرائیلی فوج کی گاڑیوں پر لبنان کے سرحدی علاقے کے نزدیک حملہ کیا ہے۔لبنان کے ایک سیاسی ذریعے نے خبررساں ایجنسی رائیٹرز سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ حزب اللہ نے بدھ کو سرحدی علاقے شبعا فارمز میں ایک بڑا آپریشن شروع کیا ہے اور اسرائیلی فوج کے ایک قافلے کو نشانہ بنایا ہے۔

صہیونی فوج نے اپنے ٹویٹر اکاؤنٹ پر ایک مختصر تحریر میں کہا ہے کہ ''شبعا فارمز (حردوف) کے علاقے میں ایک فوجی گاڑی کو ٹینک شکن میزائل سے نشانہ بنایا گیا ہے''۔یہ علاقہ شام کی سرحد کے نزدیک حد متارکہ جنگ (سیزفائرلائن) پر واقع ہے۔

اسرائیل کے ایک سکیورٹی ذریعے کا کہنا تھا کہ فوجی گاڑی پر قریب سے شدید فائرنگ کی گئی تھی جس کے نتیجے میں متعدد افراد زخمی ہوئے ہیں اور علاقے میں گولہ باری کے تبادلے کا سلسلہ جاری ہے۔

اسرائیلی فوج نے اس حملے کے جواب لبنان کے جنوبی علاقے میں سرحد کے نزدیک مزروعہ زمین پر تیرہ گولے فائر کیے ہیں۔العربیہ کے نمائندے کی اطلاع کے مطابق گولے ایک گاؤں وزنی کے نزدیک گرے ہیں اور اس حملے کے بعد لبنانی فوج نے مکینوں کو علاقہ خالی کرنے کی ہدایت کردی ہے۔

قبل ازیں اسرائیلی فوج نے بدھ کی صبح شامی فوج کے توپ خانے کے ٹھکانوں پر فضائی حملے کیے تھے۔ اسرائیلی فوج کے طیاروں نے یہ بمباری منگل کے روزشامی علاقے کی جانب سے آنے والے دو راکٹوں کے جواب میں کی ہے۔یہ دو راکٹ اسرائیل کے مقبوضہ گولان کی چوٹیوں پر گرے تھے۔

اسرائیلی فوج نے راکٹوں کے گرنے کے بعد سیاحتی مقام ماؤنٹ ہرمن کو خالی کرنے کے لیے کَہ دیا تھا۔اسرائیل کے چینل ٹو ٹی وی کی اطلاع کے مطابق اس راکٹ حملے میں کوئی جانی نقصان نہیں ہوا تھا اور اسرائیلی فوج نے جوابی حملہ کیا ہے۔

واضح رہے کہ اسرائیلی فوج نے 18 جنوری کو گولان کی چوٹیوں کے نزدیک شام کے سرحدی صوبے القنطیرہ میں لبنان کی شیعہ ملیشیا حزب اللہ کے ایک قافلے پر میزائل داغے تھے جن کے نتیجے میں پاسداران انقلاب ایران کے ایک میجر جنرل محمد اللہ دادی اور حزب اللہ کے دومرکزی کمانڈروں سمیت چھے جنگجو ہلاک ہوگئے تھے۔ان میں شیعہ ملیشیا کے مقتول کمانڈر عماد مغنیہ کا بیٹا جہاد مغنیہ بھی شامل تھا۔حزب اللہ نے ان کی ہلاکتوں کا بدلہ لینے کا اعلان کیا تھا اور آج سرحدی علاقے میں صہیونی فوج پر حملہ اسی سلسلے کی کڑی ہے جس کے بعد حزب اللہ اور اسرائیل کے درمیان مکمل جنگ چھڑ جانے کا امکان پیدا ہوگیا ہے۔