عراق کا اردن سے صدام کی بیٹی کو حوالے کرنے کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

عراقی وزارت خارجہ نے اردن کی وزارت خارجہ سے مطالبہ کیا ہے کہ اردن میں مقیم ان عراقی شخصیات کو حوالے کیا جائے جن پر بغداد حکومت دہشت گردی کی سپورٹ اور منی لانڈرنگ کا الزام عائد کرتی ہے۔ ان شخصیات میں مبینہ طور پر سابق عراقی صدر صدام حسین کی بیٹی رغد حسین بھی شامل ہیں۔

وزارت خارجہ کی جانب سے جاری بیان کے مطابق عراق کے وزیر خارجہ ابراہیم الجعفری کا کہنا ہے کہ ان کے ملک نے عدالتی کارروائی کے لیے مطلوب اردن کی سرزمین پر موجود شخصیات کے حوالے کیے جانے کے سلسلے میں اردن سے تعاون کا مطالبہ کیا ہے۔

اس دوران عراقی ویب سائٹ "شفق نيوز" نے انکشاف کیا ہے کہ عراق نے جن شخصیات کا مطالبہ کیا ہے ان میں نمایاں ترین رغد صدام حسین ہیں۔ ان کے علاوہ موجودہ عراقی حکام کے لیے حزب اختلاف کی متعدد شخصیات بھی ہیں۔

واضح رہے کہ عراق کئی مرتبہ اردن سے رغد صدام حسین کو حوالے کیے جانے کا مطالبہ کرچکا ہے جو 2003 سے دارالحکومت عمان میں مقیم ہیں۔ تاہم اردن ہر مرتبہ ان مطالبوں کو مسترد کرتا رہا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں