یمن: معزول صالح فورسز کا اہم کمانڈر ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

العربیہ کے ذرائع کے مطابق ہفتے کی شام یمن کے شمال میں صعدہ میں عرب اتحادی طیاروں کے حملے میں ایک حوثی کمانڈر علی عبدالله القوسی اور اس کے بعض ساتھی ہلاک ہو گئے۔

اس سے قبل ذرائع نے تصدیق کی تھی کی سرحدی صوبے صعدہ کے ضلع مجز میں الجربہ کے علاقے میں اتحادی طیاروں کی دو کارروائیوں میں بریگیڈیئر حسن الملصی اپنے چند ساتھیوں سمیت مارا گیا ہے۔ الملصی کو معزول صدر صالح کی ہمنوا فورسز کا ایک اہم عسکری قائد شمار کیا جاتا ہے جس کو کچھ عرصہ قبل سعودی عرب کے ساتھ سرحدی علاقوں میں بھیجا گیا تھا۔

حوثی کمانڈر ہلاک

ادھر یمن کے صوبے مارب کے مغرب میں صراوح کے محاذ پر حوثی کمانڈر عباس الضانعی ہلاک ہو گیا جو حوثیوں کے سربراہ عبد الملک الحوثی کے نزدیک سمجھا جاتا ہے۔ مذکورہ محاذ پر دو ہفتوں سے شدید جھڑپیں جاری ہیں۔ طبی ذرائع نے تصدیق کی ہے کہ الضانعی کی لاش 3 روز قبل صنعاء کے فوجی ہسپتال لائی گئی تھی جس پر حوثیوں نے شدت سے پردہ ڈالنے کی کوشش کی۔

ادھر اتحادی طیاروں نے صعدہ ، مارب اور صنعاء میں ملیشیاؤں کے ٹھکانوں اور جمع ہونے کے مقامات کو شدید بم باری کا نشانہ بنایا۔

تعز صوبے میں اتحادی طیاروں نے صوبے کے شمال مغرب میں واقع ساحلی علاقے الخوخہ میں باغی ملیشیاؤں کو نشانہ بنایا۔

دوسری جانب البیضاء صوبے میں عوامی مزاحمت کاروں کے ذرائع نے بتایا ہے کہ اتحادی طیاروں کے فضائی حملوں میں حوثی ملیشیاؤں کے درجنوں ارکان ہلاک ہو گئے۔

مقامی ذرائع کے مطابق اس دوران باغیوں کے ٹھکانوں پر گیارہ حملے کیے گئے۔

علاوہ ازیں باغیوں کے ایک عکسری کیمپ کو بھی بم باری کے ذریعے مکمل طور تباہ کر دیا گیا جس کے نتیجے میں وہاں موجود تمام ساز و سامان برباد ہو گیا جب کہ ملیشیاؤں کے درجنوں افراد مارے گئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں