.

یمن: حوثی ملیشیائیں بچوں کی بھرتی میں ملوث

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں حوثی ملیشیاؤں نے گزشتہ ماہ دسمبر میں صنعاء کے مغرب میں واقع صوبے المحویت میں 450 سے زیادہ بچوں کو زبردستی بھرتی کیا اور ان کے گھر والوں کے منع کرنے کے باوجود ان بچوں کو لڑائی کے محاذوں پر بھیجا۔ مقامی ذرائع کے مطابق بھرتی کیے جانے والے بچوں کی عمریں 13 برس سے زیادہ نہیں ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ المحویت میں بھرتی کی آخری کارروائی میں ملحان ضلعے کی مقامی کونسل کے حوثی نواز سکریٹری جنرل محمد یحیی عبدہ نے ایک ثقافتی دورے میں شرکت کے بہانے تقریبا 50 بچوں کو جمع کیا اور پھر ان کو لڑائی کے محاذوں پر بھیج دیا۔

ذرائع نے مزید بتایا کہ بچوں کو زبردستی بھرتی کرنے کی بنیادی وجہ حالیہ جھڑپوں میں باغیوں کی ہلاکتوں میں اضافہ ہے جس کے نتیجے میں ان ملیشیاؤں کے شانہ بشانہ لڑنے والے جنگجوؤں کی تعداد میں شدید کمی واقع ہوئی۔

قبائلی ذرائع نے "العربیہ ڈاٹ نیٹ" کو بتایا کہ ملیشیاؤں نے کچھ عرصہ قبل المحویت میں سیکڑوں بچوں کی تربیت کے لیے نئے کیمپ بھی قائم کیے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ غلط رہ نمائی کا شکار ہونے والے بچوں میں سے درجنوں بچے نہم کے علاقے میں مقتول حالت میں لکڑی کے بکسوں میں اپنے گھروں کو لوٹا دیے گئے۔

ایک سال کے دوران 10 ہزار بچے بھرتی

اس سے قبل یمن میں انسانی حقوق کے ذرائع کے اندازے کے مطابق گزشتہ سال 2016 کے دوران باغی حوثی ملیشیاؤں نے تقریبا 10 ہزار بچوں کو بھرتی کیا۔

اقوام متحدہ نے جون کے اوائل میں ایک رپورٹ جاری کی تھی جس میں وسیع پیمانے پر بچوں کی بھرتیوں اور ان کو لڑائی کے محاذوں پر دھکیلے جانے کی سخت مذمت کی گئی تھی۔ رپورٹ کے مطابق 2014 کے مقابلے میں یمن میں بھرتی کیے جانے والے بچوں کی تعداد میں تقریبا 5 گُنا اضافہ ہوا ہے۔

باغیوں کے ہاتھوں سے علاقوں کو آزاد کرانے کی متعدد کارروائیوں کے دوران مسلح ملیشیاؤں کی جانب سے بچوں کے خلاف مرتکب پامالیوں کا انکشاف ہوا۔

اس سے قبل عوامی مزاحمت کار کئی بار اعلان کر چکے ہیں کہ انہوں نے باغیوں کی ملیشیاؤں میں متعدد جنگجو بچوں کو قیدی بنایا۔ یہ امر نابالغ بچوں کی غیر قانونی صورت میں بھرتی اور ان کو لڑائی میں زبردستی جھونکے جانے کی تصدیق کرتا ہے۔ اگرچہ بین الاقوامی رپورٹوں میں بچوں کی بھرتی اور ان کو جنگوں میں ایندھن کے طور پر استعمال کرنے کے نتائج سے خبردار کیا جا چکا ہے تاہم حوثی ملشیاؤں کی جانب سے اس غیر انسانی اقدام کا سلسلہ جاری ہے۔