.

صدر منصور ھادی کا قاتل ملیشیاؤں کو نیست ونابود کرنے کا عزم

المخا کوباغیوں سے چھڑانے پرعسکری قیادت کو مبارکباد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کے صدر عبد ربہ منصور ھادی نے المخا ڈاریکٹوریٹ اور اس کے اطراف کے تمام علاقوں سے باغیوں کا صفایا کرتے ہوئے علاقے کوباغیوں سے واپس لینے پرعسکری قیادت کو مبارک باد پیش کی ہے۔ان کا کہنا ہے کہ یمن میں تباہی و بربادی پھیلانے اور قتل وغارت گری کی ذمہ دار باغی ملیشیاؤ کو نیست ونابود کرنے تک جنگ جاری رکھی جائے گی۔ ان کا کہنا ہے کہ فوج اور حکومت نواز ملیشیا مل کرباغیوں کے خلاف جنگ جاری رکھیں اور المخا سمیت دیگر تمام شہروں میں سرگرم باغیوں کو کچل دیں۔

صدر منصور ھادی نے سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کی قیادت میں یمن میں آئینی حکومت کی بحالی کے لیے جاری آپریشن کی تعریف کی اور کہا کہ یمنی فوج نے ملک میں باغیوں کے خلاف جتنی بھی فتوحات حاصل کی ہیں ان میں عرب اتحادی فوج کا اہم کردار ہے۔

خیال رہے کہ گذشتہ روز یمن کی مسلح افواج اور عوامی مزاحمتی کمیٹی کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا تھا کہ انہوں نے المخاء شہر اور اس کی تزویراتی بندرگاہ سے باغیوں کو نکال باہر کیا ہے اور یہ المخاء کے تمام علاقے سرکاری فوج کے کنٹرول میں ہیںِ۔

خیال رہے کہ المخا بندرگاہ کو باغیوں سے چھڑانے کے لیے وسیع پیمانے پر آپریشن دو ہفتے قبل شروع ہوا تھا۔ اس آپریشن کا مقصد باغیوں کے اہم اسلحہ سپلائی روٹ پرقبضہ کرنا اور حوثی اور علی صالح ملیشیا کو باب المندب اور المخا بندرگاہوں کے راستے ہونے والی اسلحہ کی ترسیل روکنا تھا۔

المخاء بندرگاہ یمن کے مغربی ساحل پرواقع اہم ترین تزویراتی بندرگاہ ہے۔ یہ بندرگاہ تعز کے مغرب میں 94 کلو میٹر کی دوری پر واقع ہے۔

بحر احمر پر واقع ہونے کی وجہ سے المخا بندرگاہ کو غیرمعمولی اہمیت کا حامل سمجھا جاتا ہے۔ یہ بندرگاہ اب تک باغیوں کو سمندر کے راستے اسلحہ کی سپلائی کا اہم ترین راستہ قرار دی جاتی رہی ہے۔ اس علاقے پر سرکاری فوج کے کنٹرول نے باغیوں کو اسلحہ سپلائی کے اہم راستے سے محروم کردیا ہے۔