.

مصر: پولیس کی کارروائی میں چار مشتبہ جنگجو ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصری پولیس نے دارالحکومت قاہرہ کے نواح میں ایک کارروائی کے دوران میں چار مشتبہ جنگجوؤں کو ہلاک کردیا ہے۔مصری وزارت داخلہ نے ہفتے کے روز ایک بیان میں کہا ہے کہ چاروں مہلوکین ایک بڑے حملے کی منصوبہ بندی کر رہے تھے۔

بیان میں بتایا گیا ہے کہ ’’تکفیری‘‘ سیل قاہرہ کے جنوب مغرب میں واقع صوبے جیزہ میں ایک اجلاس منعقد کررہا تھا۔اس دوران پولیس نے ان کے خفیہ ٹھکانے پر چھاپا مار کارروائی کی ہے۔

جب دہشت گردوں کو پولیس کی آمد کا پتا چلا تو انھوں نے اپنے بچاؤ کے لیے فائرنگ شروع کردی۔اس کے جواب میں پولیس نے بھی فائرنگ کی ہے جس سے چار مشتبہ جنگجو ہلاک ہوگئے ہیں۔بیان میں کہا گیا ہے کہ وہ مستقبل قریب میں دہشت گردی کے ایک حملے کی منصوبہ بندی کررہے تھے۔

فوری طور پر ان مشتبہ افراد کی کسی جنگجو گروپ سے وابستگی کے حوالے سے کچھ پتا نہیں چلا ہے۔ لیکن مصری پولیس عام طور پر داعش یا القاعدہ سے وابستہ گروپوں یا جنگجوؤں کو ’’تکفیری‘‘ قرار دیتی چلی آرہی ہے۔تکفیری اس گروہ کو کہا جاتا ہے جو اپنے سوا سب کو کافر قرار دیتا ہے۔

مصر میں داعش کی شاخ سے وابستہ جنگجوؤں نے جولائی 2013ء کے بعد سے شورش زدہ علاقے جزیرہ نما سیناء اور دارالحکومت قاہرہ میں بم حملوں میں سیکڑوں فوجیوں اور پولیس اہلکاروں کو ہلاک کردیا ہے۔ تشدد کا یہ سلسلہ اب تک جاری ہے اور داعش سے وابستہ صوبہ سیناء نامی مسلح گروپ کے جنگجو آئے دن شورش زدہ جزیرہ نما سیناء میں مصری سکیورٹی فورسز کے اہلکاروں پر حملے کرتے رہتے ہیں۔