.

ایرانی سکیورٹی فورسز کا محمود احمدی نژاد کے گھر کا گھیراؤ !

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایرانی میڈیا کی رپورٹوں کے مطابق ایرانی سکیورٹی فورسز نے اتوار کی شام سے سابق صدر محمود احمدی نژاد کے گھر کا گھیراؤ کیا ہوا ہے۔ نژاد پر عائد بدعنوانی کے الزامات کے سبب عدلیہ ان کے خلاف کارروائی کے لیے سرگرم ہو چکی ہے۔

احمدی نژاد کے قریب شمار کی جانے والی ویب سائٹ "دولت بہار" کے مطابق ایرانی سکیورٹی فورسز اور انٹیلی جنس کے اہل کاروں نے تہران کے شمال مشرق میں واقع علاقے "72 نارمک" میں سابق صدر کی رہائش گاہ کا محاصرہ کیا ہوا ہے۔

ویب سائٹ نے اس گھیراؤ کا سبب نہیں بتایا۔ تاہم اپوزیشن کی ویب سائٹوں کے مطابق یہ اقدام اسی قسم کی پابندی یا نظربندی کی تیاری کے سلسلے میں ہے جو اس وقت سابق صدر محمد خاتمی اور سبز تحریک کے رہ نماؤں میر حسین موسوی اور مہدی کروبی پر عائد ہے۔

ادھر آمد نیوز ویب سائٹ کا کہنا ہے کہ احمدی نژاد کے گھر کے محاصرے کا مقصد ان کی گرفتاری اور عدالت میں پیشی ہے جس کا حکم عدلیہ کے سربراہ صادق لاریجانی نے دیا ہے۔

اس سے قبل آڈٹ بیورو کے پراسیکیوٹر جنرل فیاض شجاعی نے انکشاف کیا تھا کہ محمود احمدی نژاد کے مجموعی دور صدارت (2005 - 2013) کے دوران بدعنوانی کا شکار ہونے والی رقم کا حجم سات ہزار ارب ایرانی تومان (175 ارب ڈالر) کے قریب ہے۔

ایرانی حکام صدر حسن روحانی کے نائب اسحاق جہانگیری کے بھائی مہدی جہانگیری کو مالی بدعنوانی کے الزامات کے تحت گرفتار کر چکی ہے۔ وہ تہران چیمبر آف کامرس کے نائب صدر بھی ہیں۔ انہوں نے محمود احمدی نژاد کے دور حکومت میں متعدد منصبوں پر کام کیا۔