.

عراقی وزیراعظم کا الحشد الشعبی کے ساتھ سیاسی اتحاد افسوس ناک ہے: مقتدیٰ الصدر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق کے مقبول شیعہ رہ نما اور صدری تحریک کے سربراہ مقتدیٰ الصدر نے وزیراعظم حیدر العبادی کے ایران کی حمایت یافتہ شیعہ ملیشیا ؤں پر مشتمل الحشد الشعبی کے ساتھ اتحاد کو تنقید کا نشانہ بنا یا ہے اور اس کو مضحکہ خیز قرار دیا ہے۔

مقتدیٰ الصدر عرا ق کی مقبول سیاسی اور مذہبی شخصیت ہیں اور وہ صدر ی تحریک کے سربراہ ہیں۔ انھوں نے اتوار کو عراقی وزیراعظم کے اس نئے اتحاد کے بارے میں ایک بیان جاری کیا ہے اور اس میں اس کو ایک ’’قابل اعتراض سیاسی سمجھوتا ‘‘ قرار دیا ہے۔

انھوں نے اپنے بیان میں شیعہ ملیشیاؤں پر مشتمل الحشد الشعبی کو سیاسی دھارے میں شامل کرنے کی کوشش پر حیرت کا اظہار کیا ہے اور کہا ہے کہ ’’اس طرح کے دوغلے پن سے ایک بدعنوان سیاسی کلاس پیدا کرنے کی کوشش کی جارہی ہے‘‘۔

انھوں نے واضح کیا ہے کہ وہ آیندہ عام انتخابات میں ان مہم جو گروپوں کی حمایت کریں گے جو فرقہ وار بنیاد پر کوٹا کی تقسیم کے اصول کو مسترد کرتے ہیں۔

عراقی وزیراعظم حیدر العبادی نے اتوار کو ہادی الامیری کے ساتھ ’’ فتح عراق اتحاد‘‘ کی تشکیل کے لیے ایک سمجھوتے پر دستخط کیے ہیں۔انھوں نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ’’ یہ اتحاد عراق کے لیے لڑنے والے شہداء کی قربانیوں اور زخمی ہیروز کا تحفظ کرے گا اور قومی ٹیلنٹ پر انحصار کرتے ہوئے کرپشن کی تمام شکلوں کے خلاف لڑے گا‘‘۔

انھوں نے مزید کہا:’’ یہ اتحاد تمام عراقیوں کے کام کرے گا، ملک کے اتحاد اور قومی خود مختاری کو مضبوط بنائے گا اور عراقیوں کو مسا وات کی بنیاد پر حقوق اور فرائض میں انصاف دلائے گا‘‘۔