.

مقتدیٰ الصدر کے مجوزہ وزیراعظم میں کیا خصوصیات ہونی چاہئیں؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق کے شیعہ مذہبی سیاسی رہ نما مقتدیٰ الصدر نے نئی حکومت کی تشکیل اور مجوزہ سربراہ حکومت کے حوالے سے اپنی شرائط جاری کردی ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق الصدر گروپ کے سربراہ مقتدی الصدر نے واضح کردیا ہے کہ وہ مُلک میں کیسا وزیراعظم دیکھنا چاہتے ہیں اور وہ کون سا امیدوار ہوسکتا ہے جس کے حق میں’سائرون‘ اتحاد اپنا ووٹ استعمال کرتے ہوئے وزارت عظمیٰ کے منصب پر اس کی حمایت کرے۔

الصدر کے مقربین نے ایک دستاویز کا حوالہ دیا ہےجس میں مقتدیٰ الصدر نے نئے وزیراعظم کے بارے میں اپنی شرائط بیان کی ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ ملک میں ایک ایسا وزیراعظم چاہتے ہیں جو آزادانہ طورپر کام کرے اور کسی مخصوص جماعت کا تابع نہ ہو۔ نیز وہ منتخب ارکان میں شامل نہ ہو بلکہ پارلیمنٹ سے باہر سے لیا جائے۔

مقتدیٰ الصدر کا کہنا ہے کہ وہ ایسے شخص کی وزارت عظمیٰ کے عہدے کے لیے حمایت کریں گے جس کے پاس دہری شہریت نہ ہو اور اس پر کسی قسم کی مالی، اخلاقی اور بد انتظامی کرپشن کا الزام نہ ہو۔

سیاسی جماعتیں وزیراعظم کے چناؤ کے لیے مداخلت نہ کریں۔ پانچ ٹیکنوکریٹ شخصیات کو وزارت عظمیٰ کے لیے چنا جائے اور ان میں سے کسی ایک کو یہ منصب سونپا جائے۔

وزیراعظم ایسا ہونا چاہیے جو آئندہ پارلیمانی انتخابات میں خود کو امیدوار بنانے کا ارادہ نہ رکھتا ہو اور وہ کسی قسم کی فرقہ وارانہ سوچ سے بالا تر رہ کر کام کرنے کا عزم کرے۔

ان شرائط کے مطابق موجودہ وزیراعظم حیدر العبادی دوسری بار وزارت عظمیٰ کے عہدے کے اہل نہیں۔