مصر انٹرپول کی مدد سے اسمگل شدہ 32 ہزار نوادرات واپس لینے میں کامیاب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

مصرکی حکومت نے بین الاقوامی اداروں بالخصوص انٹرپول کی مدد سے اسمگل شدہ ہزاروں قیمتی نوادرات واپس حاصل کرنے میں کامیابی حاصل کی ہے۔

مصری وزارت آثار قدیمہ کی طف سے جاری کردہ ایک بیان میں بتایا گیا ہے کہ گذشتہ کئی عشروں سے ملک کے عجائب گھروں اوردیگر تاریخی مراکز سے ہزاروں قیمتی نوادرات چوری ہونے کے بعد بیرون ملک اسملگ کی گئی۔ موجودہ حکومت نے انٹرپول اور دیگر متعلقہ اداروں کی معاونت سے 32 ہزار 638 قیمتی نوادرات واپس حاصل کرلی ہیں۔

وزارت آثار قدیمہ کا کہنا ہے کہ اسمگل کی گئی نوادرات کا 90 فی صد کا وزارت آثاریات میں اندراج تک نہیں ہوا جب کہ بعض نودرات کو اسمگل ہوئے50 سال تک گذر گئے۔ 25 جنوری 2011ء کے انقلاب کے دوران آخری باربڑی تعداد میں قیمتی نوادرات چوری کی گئیں اور انہیں عالمی اسمگلروں کی مدد سے بیرون ملک فروخت کیا گیا۔

مصر کے وزیر برآئے آثار قدیمہ ڈاکٹر خالد العنانی نے ہفتے کے روز میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ان کی حکومت عالمی نیلامی فورمز کے ساتھ مصر کی چوری کی گئی نوادرات کی واپسی کے لیے رابطے میں ہے۔ ہمیں جہاں‌بھی مصر کی نوادرات کی موجودگی کا پتا چلتاہے ہم انہیں واپس کرانے کے لیے قان نافذ کرنے والے اداروں سمیت دیگر ذرائع کا استعمال کرتے ہیں۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں‌نے بتایا کہ بعض نودارات اسرائیل اسمگل کی گئی تھیں اور وہاں سے بھی انہیں واپس لایا گیا ہے۔

ادھر ہفتے کے روزمصری کابینہ نے آثار قدیمہ کے حوالےسے انکشاف کیا کہ 2018ء کے دوران 222 تاریخی نوادرات اور 21 ہزار 660 دھاتی سکے واپس صر لائے گئے۔ کابینہ کا کہنا ہے کہ مصری نوادرات کی واپسی میں دوسرے ممالک کی حکومتوں نے قاہرہ کے ساتھ بھرپور تعاون کیا۔

مصر کے محکمہ آثارقدیمہ کے ڈائریکٹر شعبان عبدالجواد نے "العربیہ ڈاٹ نیٹ" سے بات کرتے ہوئے کہا کہ بیرون ملک اسمگل کی گئی قیمتی نوادرات کا درست اندازہ لگانا مشکل ہے۔ بیرون ملک سے جتنی نوادرات واپس کی گئی وہ اسمگل شدہ نوادرات کی نسبت آٹے میں نمک کے برابر ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ حکومت عالمی نیلام مراکز، آن لائن ویب سائیٹس، ہوائی اڈوں اور بندرگاہوں سمیت ہر اس مقام پر مصری نوادرات کو ڈھونڈ رہی ہے جہاں پر ان کی موجودگی امکان موجود ہے۔

ایک سوال کے جواب میں‌انہوں‌نے کہا کہ مصر اپنی کھوئی نوادرات کے حصول کے

لیے سفارتی ذرائع کا بھی استعمال کررہاہے۔ مصر نےامریکا سے تین، قبرص سے 14، اور کویت سے ایک تابوت واپس کرایا۔ اس کے علاوہ اٹلی، فرانس، جرمنی اور دوسرے ممالک سے بھی مصری نوادارات واپس کی گئیں۔ گذشتہ برس لندن میں ایک نیلام گھر میں معبد الکرنک کا چوری شدہ ایک قیمتی مجسمہ جو تین عشرے قبل چوری کیا گیا واپس کیا گیا۔ یہ 3500 سال پرانا قیمتی تحفہ ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں