.

شام: داعش کے ارکان کے ہتھیار ڈالنے کی سب سے بڑی کارروائی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام میں انسانی حقوق کے سب سے بڑے نگراں گروپ المرصد نے بدھ کے روز بتایا ہے کہ داعش تنظیم کے تقریبا 350 ارکان نے خود کو سیرین ڈیموکریٹک فورسز (ایس ڈی ایف) کے حوالے کر دیا ہے۔

المرصد کے مطابق منگل کے روز دریائے فرات کے مشرق میں الباغوز کے کھیتوں سے 1400 کے قریب افراد نکلے جن میں کم از کم 350 داعش تنظیم کے ارکان تھے۔ شہریوں اور داعش تنظیم کے جنگجوؤں، تنظیم کے ارکان کے گھرانوں اور تنظیم کے کمانڈروں کی ایک بڑی تعداد ابھی تک داعش کے زیر کنٹرول باقی ماندہ علاقے سے باہر نکلنے کی منتظر ہے۔

ان کے علاوہ داعش کے درجنوں کمانڈروں اور ارکان نے علاقے سے نکلنے سے انکار کرتے ہوئے آخر تک لڑنے کو ترجیح دی ہے۔

المرصد کا کہنا ہے کہ گزشتہ دو روز کے دوران الباغوز سے 3600 افراد نکل آئے جن میں داعش کے 470 ارکان ہیں۔

اس طرح المرصد نے یکم دسمبر 2018 سے اب تک مختلف شہریتوں کے حامل 51050 افراد کے باہر آنے کی تصدیق کی ہے۔ ان میں شامی، عراقی، روسی، صومالی اور فلپینی شہریوں کے علاوہ دیگر ایشیائی اور مغربی باشندے شامل ہیں۔

یاد رہے کہ ایس ڈی ایف نے جیلوں میں غیر ملکی داعشیوں کو رکھا ہوا ہے۔ اس نے بارہا یہ اپیل کی ہے کہ غیر ملکی شہریتوں کے حامل ان افراد کے لیے حل تلاش کیا جائے اور انہیں ان کے ملکوں کے حوالے کر کے ان کے خلاف عدالتی کارروائی کی جائے۔

گزشتہ دو روز کے دوران تنظیم کے سیکڑوں ارکان کو عراق کے حوالے کیا گیا۔

عراق کے سکیورٹی میڈیا سینٹر کی جانب سے جاری بیان میں واضح کیا گیا ہے کہ حوالے کیے جانے والے تمام افراد عراقی شہریت رکھتے ہیں۔