.

شام: دمشق میں فوجی بس میں دو دھماکے، 13 افراد ہلاک، تین زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام کے دارالحکومت دمشق میں ایک فوجی بس میں دو دھماکوں کے نتیجے میں 13 فوجی اہلکار ہلاک ہوگئے۔ سرکاری ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق یہ دھماکا اس موقع پر کیا گیا جب بس ایک پل کے اوپر سے گزر رہی تھی۔

شام کے سرکاری ٹی وی چینل کے ٹیلی گرام اکائونٹ پر پوسٹ کردہ اپ ڈیٹ میں متاثرہ بس کی تباہ حال تصاویر شئیر کی گئی ہیں۔ دو دھماکوں کے نتیجے میں بس مکمل طور پر تباہ ہوگئی اور اطلاعات کے مطابق بم دھماکے میں 13 فوجی ہلاک جبکہ 3 افراد زخمی ہوگئے ہیں۔

شامی ذرائع کے مطابق بس کو دمشق کے حافظ الاسد پل پر دو دھماکوں کی مدد سے نشانہ بنایا گیا جبکہ شامی فوج کی انجینئرنگ یونٹ نے ایک بم کو ناکارہ بنا دیا۔ حکام نے اس دھماکے کو دہشت گرد دھماکا قرار دیا۔

رواں سال کے دوران مشرقی شام میں شامی فوج کی گاڑیوں کو نشانہ بنانے کی کارروائیوں میں اضافہ دیکھا گیا ہے جس کے بارے میں گمان کیا جاتا ہے کہ ان سرگرمیوں کو داعش کے جنگجو شامل ہیں۔

اقوام متحدہ کے مطابق شام میں جاری دس سالہ خانہ جنگی کے نتیجے میں 3 لاکھ 50 ہزار افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔

دمشق میں بشار الاسد کی وفادار فوج کی جانب سے باغیوں کے خلاف کامیابی کے بعد سے بم دھماکوں کا سلسلہ تھم گیا تھا مگر آج کے واقعہ کے بعد حالات بگڑتے نظر آرہے ہیں۔