حج سیزن

مکہ مکرمہ میں حج کے حوالے سے کیا انتظامات کیے گئے ہیں؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

مکہ معظمہ کی میونسپلٹی نے اس سال حج سیزن 1444ھ کے لیے اپنی تیاریاں مکمل کر لی ہیں۔ مکہ المکرمہ کی بلدیہ کے سرکاری ترجمان اسامہ الزیتونی نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ بلدیہ نے قبل از وقت ہی حجاج کرام کو بہترین خدمات فراہم کرنے کے لیے اپنے منصوبے اور بیت اللہ کے طواف کے حوالے سے اپنے کام مکمل کرلیے ہیں۔

حج کے انتظامات کے سلسلے میں انہوں نے کہا کہ مکہ معظمہ بلدیہ کے زیرانتظام تمام ادارے اور دوسرے اداروں کے ساتھ مل کرحج آپریشن کررہے ہیں۔ اس حوالے سے تمام انسانی اور مشینی توانائی بروئے کار لائی گئی ہیں۔ میونسپلٹی، پبلک سکیورٹی، مجاہدون اور اسکاؤٹس کی معاون ٹیموں سے مدد لی جا رہی ہے۔ عارضی ہیلتھ مانیٹرز بھی مقرر کیے گئے ہیں اور انہیں تمام طبی سہولیات اور سروس فراہم کی گئی ہیں تاکہ حج کے موقعے پر عازمین کو بہتر خدمات فراہم کی جا سکیں اور انہیں مناسک اور عبادت کی ادائی میں کسی دقت کا سامنا نہ کرنا پڑے۔

انہوں نے مزید کہا کہ "میونسپلٹی نے اپنی 13 ذیلی میونسپلٹیوں اور 3 منسلک میونسپلٹیوں کوبھی حج انتظامات میں شامل کیا ہے۔ اس کے علاوہ مقدس مقامات میں 28 سروس سینٹرز قائم کیے گئے ہیں جو مقدس مقامات کے پورے علاقے میں تقسیم کیے گئے ہیں۔ انہیں تمام جدید آلات اور افرادی قوت فراہم کی گئی ہے۔

انسانی وسائل

زیتونی نے کہا کہ "حج منصوبے پر عمل درآمد کے لیے 22,000 افراد کو بھرتی کیا گیا ہے جس میں تمام شعبے شامل تھے۔ مقدس دارالحکومت میونسپلٹی کے ملازمین کی تعداد 3,159 تک پہنچ گئی ہے۔ اس کے علاوہ آپریٹنگ، دیکھ بھال، روشنی، سہولیات اور قربانی کے جانور ذبح کرنے والے یونٹس کے 3,600 ملازمین اور صحت عامہ کے پانچ سو افراد تعینات کیےگئے ہیں۔

صفائی

انہوں نے وضاحت کی کہ صفائی کے شعبے میں جدید ترین آلات جیسے کمپریسرز، روبوٹک ویکیوم کلینر، ٹپر، بوبکیٹس وغیرہ سے لیس کیا جائے گا اور پرہجوم علاقوں میں دن میں 24 گھنٹے کام کیا جائے گا۔صفائی کا کام تین شفٹوں میں کیا جائےگا۔

حج کی تیاریاں

کسی بھی ہنگامی صورتحال جیسے بارش یا آگ کا سامنا کرنے کے لیے، یا ضرورت پڑنے پر کسی بھی علاقے کی مدد کے لیے مرکزی ٹیمیں مختص کی گئی ہیں۔ صفائی کے لیے متعدد الیکٹرک کوڑےدان اور شمسی توانائی سے چلنے والے ڈبوں کا استعمال کیا جائے گا۔

انہوں نے یہ بھی مزید کہا کہ مقدس مقامات کو اس عرصے کے دوران مبصرین اور نگرانوں کی طرف سے مدد فراہم جائے گی۔ اس کے علاوہ انہیں ویکیوم کلینرز اور ویکیوم کلینر جیسے پلوں، بوبنز، ٹپرز، وہیل لوڈرز وغیرہ سے فضلہ اکٹھا کرنے کے لیے ضروری آلات کی مدد حاصل ہوگی۔

انہوں نےبتایا کہ منیٰ میں کمپریس ہونے کے بعد عارضی ذخیرہ کرنے کے لیے 110 گراؤنڈ گودام تیار کیے گئے ہیں تاکہ سامان کو حرکت میں لانے میں دشواری کا سامنا نہ ہو اور 1,070 کمپریشن بکسوں کے علاوہ 9 بڑے کمپریسر ٹریلرز، 4 ٹرانزٹ اسٹیشنز قائم کیے گئے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں