غزہ کے الاھلی ہسپتال پر حملہ، اسرائیلی دعوے کی ویڈیو پرانی نکل آئی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی فوج غزہ کی پٹی پر گذشتہ روز کیے گئے حملے کی تردید پر قائم رہتے ہوئے ایک ویڈیو جاری کی ہے جس کے بارے میں دعویٰ کیا ہے کہ وہ گذشتہ روز ہسپتال پر جنگجوؤں کے راکٹ حملے کی ہے، تاہم اسرائیلی فوج اور خفیہ ادارے ’موساد‘ کی طرف سے ’ایکس’ پلیٹ فارم پر پوسٹ کی گئی ویڈیو کو جب سرچ انجنز پر تلاش کیا گیا تو پتا چلا کہ یہ 2022ء کے ایک واقعے کی ویڈیو ہے، جسے اسرائیلی فوج گذشتہ روز ہسپتال پر کیے گئے حملے کے ساتھ جوڑ کر خود کو تنقید سے بچانے کی کوشش کر رہی ہے۔

اسرائیلی دعویٰ درست نہیں نکلا بلکہ یہ ایک جھوٹ ہے کیونکہ سرچ انجنز نے انکشاف کیا کہ یہ کلپ پرانا ہے اور گزشتہ سال اگست کا ہے۔ اسرائیلی تجزیہ کاروں اور دیگر سرکاری اکاؤنٹس نے اسے المعمدانی ہسپتال پر ہونے والے بم دھماکے سے متعلق جوڑنے کی کوشش کی ہے۔

دوسری جانب، اکاؤنٹس نے پر پوسٹ کی گئی ویڈیو پر صارفین کی طرف سے بھی رد عمل سامنے آیا ہے اور اسے پرانی ویڈیو قرار دیا جا رہا ہے۔

اسرائیل کے @Israel نامی ایک آفیشل اکاؤنٹ سے جعلی ویڈیو پوسٹ کی گئی جس میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ حماس کے راکٹ کو غزہ کے عرب الاھلی ہسپتال کو نشانہ بناتے دکھایا گیا ہے۔

دریں اثنا اسرائیل کا اصرار ہے کہ ہسپتال میں جو کچھ ہوا وہ اسلامی جہاد یا حماس کے راکٹ داغنے کے نتیجے میں ہوا۔اسرائیلی فوج کا دعویٰ ہے کہ راکٹ اپنے ہدف تک پہنچنے میں ناکام رہا۔

انہوں نے مزید کہا کہ عرب الاھلی ہسپتال کے اردگرد کی عمارتوں کو کوئی نقصان نہیں ہوا ہے اور نہ ہی فضائی حملوں کی وجہ سے ہونے والے گڑھے پڑے ہیں۔

خیال رہے کہ کل منگل کو غزہ کے عرب الاھلی ہسپتال پر خوفناک بم حملہ کیا گیا جس کے نتیجے میں ہسپتال میں موجود پانچ سو افراد شہید اور چھ سو کے قریب زخمی ہوگئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں