السیسی نے حماس کی شکست کے بعد مصرکےغزہ کی سکیورٹی کےانتظام کی امریکی تجویز مسترد کردی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

وال سٹریٹ جرنل (ڈبلیو ایس جے) نے جمعرات کو رپورٹ کیا کہ مصری صدر عبدالفتاح السیسی نے امریکہ کی اس تجویز کو مسترد کر دیا ہے کہ مصر تب تک غزہ کی پٹی میں سکیورٹی کا انتظام سنبھالے جب تک اسرائیل کے ہاتھوں فلسطینی عسکریت پسند گروپ حماس کی شکست کے بعد فلسطینی اتھارٹی کا قبضہ نہ ہو جائے۔

ڈبلیو ایس جے نے مصری حکام کے حوالے سے رپورٹ کیا کہ السیسی اور ان کے انٹیلی جنس سربراہ عباس کمال نے قاہرہ میں امریکی سینٹرل انٹیلی جنس ایجنسی (سی آئی اے) کے ڈائریکٹر ولیم برنز سے ملاقات کی اور امریکی تجویز پر تبادلۂ خیال کیا۔

حکام نے کہا، "مصری صدر نے کہا کہ ان کی حکومت حماس کو ختم کرنے میں کوئی کردار ادا نہیں کرے گی کیونکہ اسے غزہ کی پٹی کے ساتھ ملک کی سرحد پر سیکورٹی برقرار رکھنے میں مدد کے لیے عسکریت پسند گروپ کی ضرورت ہے۔"

اسرائیلی وزیرِ اعظم بنجمن نیتن یاہو نے اے بی سی نیوز کے پیر کو نشر ہونے والے ایک انٹرویو میں کہا کہ اسرائیل غزہ میں سکیورٹی کی ذمہ داری "غیر معینہ مدت کے لیے" دوبارہ شروع کر سکتا ہے۔

نیتن یاہو نے کہا: "میرے خیال میں اسرائیل کے پاس غیر معینہ مدت کے لیے [غزہ میں] سکیورٹی کی مجموعی ذمہ داری ہوگی کیونکہ ہم نے دیکھا ہے کہ جب یہ ہمارے پاس نہ ہو تو کیا ہوتا ہے۔ جب ہمارے پاس سکیورٹی کی ذمہ داری نہ ہو تو حماس کی دہشت گردی اس قدر بڑے پیمانے پر پھوٹ پڑے گی جس کا ہم تصور بھی نہیں کر سکتے۔

امریکہ نے اسرائیلی وزیرِ اعظم کی تجویز کو مسترد کر دیا اور سیکریٹری خارجہ انٹونی بلنکن نے بدھ کے روز کہا کہ اسرائیل کو غزہ پر دوبارہ قبضہ نہیں کرنا چاہیے لیکن حماس کے ساتھ تنازع کے خاتمے کے بعد ایک عبوری دور ہو سکتا ہے۔

بلنکن نے کہا: "غزہ حماس کے زیرِ انتظام نہیں چل سکتا۔ یہ بھی واضح ہے کہ اسرائیل غزہ پر قبضہ نہیں کر سکتا۔ اب حقیقت یہ ہے کہ تنازع کے اختتام پر ایک عبوری دور کی ضرورت ہو سکتی ہے لیکن یہ ضروری ہے کہ فلسطینی عوام کو غزہ اور مغربی کنارے کی حکمرانی میں مرکزی حیثیت حاصل ہو۔"

انہوں نے زور دے کر کہا، "ہم دوبارہ قبضہ نہ کرنے کے معاملے پر بالکل واضح ہیں، بالکل اسی طرح جیسے ہم فلسطینی آبادی کے نقلِ مکانی نہ پر بالکل واضح ہیں۔"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں