فلسطین اسرائیل تنازع

یرغمالی خاندان کی اسرائیلی بمباری سے ہلاکت، جنگ بندی مذاکرات پرپرچھائی آگئی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

حماس کی طرف سے اسرائیلی یرغمالیوں کی رہائی کا سلسلہ جنگی وقفے میں توسیع کے آخری روز بھی جاری رہا۔ یہ بات جنگ بندی کے لیے کوششوں سے آگاہ فلسطینی حکام نے بدھ کے روز بتائی ہے۔

حماس کے اتحادی اسلامی جہاد موومنٹ نے اس سے پہلے کہا تھا کہ اس نے بھی جنگ بندی معاہدے کے بعد کئی اسرائیلی یرغمالی شہریوں کی فلسطینی اسیران کی رہائی کے بدلے میں رہا کیا ہے۔

دو روسی یرغمالیوں کو بھی غزہ سے رہائی مل گئی ہے۔ وہ رہائی پا کر بدھ کے روز اسرائیل پہنچ گئے ہیں۔ لیکن اسرائیلی حکام کا کہنا ہے دو روسی یرغمالیوں جن کی عمریں بالترتیب 50 سالہ ییلینا تروپانوف اور 73 سالہ ارینا تاتی کو بھی ایک الگ معاہدے تحت رہائی دی گئی ہے۔

اس سے قبل اسرائیلی حکام نے کہا تھا کہ جنگی وقفے کی توسیعی مدت ختم ہونے سے پہلے پہلے انہیں بدھ کے روز 10 مزید یرغمالیوں کی رہائی کی توقع ہے۔

تاہم ایسے وقت میں جب جنگ بندی میں دوسری توسیع کے لیے بات چیت جاری تھی حماس کی طرف سے سامنے آنے والی اس اطلاع نے مذاکرات کو اپنے سائے کی زد میں لے لیا ہے۔ حماس کی یہ اطلاع ایک اسرائیلی یرغمالی خاندان کی اسرائیلی بمباری سے ہلاکت کے بارے میں تھی۔ بتایا گیا ہے کہ اس ہلاک ہونے والے اسرائیلیوں میں بچی کفر بیباس بھی شامل ہے۔

ادھر اسرائیلی حکام نے کہا ہے کہ وہ 'حماس کی طرف سے اس یرغمالی خاندان کی بمباری سے ہلاکت کی اطلاع کا جائزہ لیا جا رہا ہے۔ اسرائیلی حکام سمجھتے ہیں کہ یہ بڑا حساس معاملہ ہے۔ '

اسرائیلی حکام کا یہ بھی کہنا ہے کہ یہ اطلاع اسرائیل میں اس خاندان کے باقی لوگوں کو پہنچا دی گئی ہے۔ متعلقہ خاندان کے لوگوں نے بھی کنرم کیا ہے کہ حکام نے آگاہ کیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں