یہودیوں پرحملوں کا امکان، کینیڈین شہری پر دہشت گردی کے جرائم کا الزام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

کینیڈا کی پولیس نے کہا ہے کہ حکام نے اوٹاوا میں ایک نوجوان پریہودیوں کو ممکنہ ہدف بنانے سے متعلق "دہشت گردی" کے جرائم کا الزام عائد کیا ہے۔ یہ واقعہ ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب مشرق وسطیٰ میں حماس اور اسرائیل کے درمیان جنگ جاری ہے۔

حکام نے کل ہفتے کے روز ایک بیان میں کہا کہ مشتبہ شخص پر "دھماکہ خیز مواد سے متعلق معلوماتی مواد پہنچا کر دہشت گردی کی سرگرمیوں میں سہولت کاری کا الزام ہے"۔

اوٹاوا کے میئر مارک سوٹکلف نے سوشل نیٹ ورکنگ پلیٹ فارم ایکس پر ایک ٹویٹ میں کہا کہ "گذشتہ چند ہفتوں کے دوران اوٹاوا میں یہود دشمنی میں اضافہ ہوا ہے"۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ حکام نے نوجوان کو جمعہ کو گرفتار کیا تھا اور اس کارروائی میں کئی کینیڈین سکیورٹی ایجنسیوں کے درمیان تعاون شامل تھا۔

پولیس نے کہا کہ نوجوان کی عمر نے اس کے بارے میں یا سازش کے بارے میں مزید معلومات جاری کرنے سے روک دیا۔

وزیر اعظم جسٹن ٹروڈو نے 7 اکتوبر کو اسرائیل پر حماس کے حملے کے نتیجے میں غزہ کی پٹی پراسرائیلی حملے کے بعد کینیڈا میں یہود دشمنی میں واضح اضافہ سے خبردار کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں