اسرائیل سے مصر کو یومیہ اوسطاً 900 ملین مکعب فٹ گیس کی درآمد جاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایک سرکاری اہلکار نے بتایا کہ جنوری 2024ء میں مصر کی اسرائیلی قدرتی گیس کی درآمدات تقریباً 900 ملین مکعب فٹ یومیہ تک پہنچ گئی ہے۔

انہوں نے العربیہ بزنس میں مزید کہا کہ اسرائیل سے آنے والی گیس کو مصری مائع بنانے والی فیکٹریوں کو بھیج دیا جاتا ہے، جس کا مقصد مائع گیس کی شکل میں غیر ملکی منڈیوں اور یورپ کو دوبارہ برآمد کرنا ہے۔

انہوں نے کہا کہ مصری مائع گیس سٹیشنوں کی صلاحیت 2024-2025 میں مصر کی مائع گیس کی برآمدات کے حجم کو بڑھانے کے لیے بیرون ملک سے مزید گیس کی درآمد حاصل کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے، کیونکہ وہ گذشتہ موسم گرما میں بند ہو گئے تھے۔ مصر عام طور پر اس موسم میں گھریلو استعمال کے لیے گیس طلب کرتا ہے۔

اسرائیل کی وزارت توانائی نے 14 دسمبر کو کہا تھا کہ اسرائیلی تمار آف شور گیس فیلڈ میں شراکت دار مصر کو سالانہ 500 ملین مکعب میٹر اضافی گیس برآمد کر سکتے ہیں۔

مصرمیں دو قدرتی گیس لیکیفیکیشن پلانٹ ہیں،پہلا اڈکو میں ہے جو مصری ایل این جی کمپنی کی ملکیت ہے۔ اس میں دو لیکیفیکشن یونٹ شامل ہیں جن کی یومیہ تقریباً 1.35 بلین مکعب فٹ قدرتی گیس کی گنجائش ہے۔ دوسرا دمیاط میں ہے۔ اس کی ملکیت اطالوی کمپنی Eni، EGAS کے پاس ہے۔

اہلکار نے نشاندہی کی کہ مصر کی قدرتی گیس کی پیداوار 6 سے 6.1 بلین کیوبک فٹ یومیہ کے درمیان ہے، جو تقریباً مکمل طور پر مقامی مارکیٹ کی طرف ہے، جو روزانہ 5.8 سے 6 بلین کیوبک فٹ استعمال کرتی ہے۔

غزہ پرجنگ کے بعد گذشتہ اکتوبرمیں اسرائیلی قدرتی گیس کی مصر کی درآمد صفر پر آ گئی تھی تاہم گذشتہ نومبر اور دسمبر کے دوران اس میں بتدریج دوبارہ اضافہ ہوا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں