سعودی وزیرِ خارجہ کی ڈیووس میں عالمی اقتصادی فورم میں آمد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی وزارتِ خارجہ نے پیر کو اعلان کیا کہ سعودی وزیرِ خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان عالمی اقتصادی فورم کے سالانہ اجلاس میں شرکت کے لیے سوئس شہر ڈیووس پہنچ گئے ہیں۔

توقع ہے کہ سعودی وفد اہم علاقائی اور بین الاقوامی چیلنجوں اور ان سے نمٹنے کے طریقوں بشمول اقتصادی انضمام، پائیداری اور تکنیکی ترقی پر تبادلۂ خیال کرے گا۔

وزارت نے ایک بیان میں کہا، "سعودی وفد نمایاں ترین موجودہ علاقائی اور بین الاقوامی چیلنجوں اور ان سے نمٹنے کے طریقوں پر تبادلۂ خیال کرے گا جن میں بین الاقوامی مکالمے اور تعاون کا فروغ، اقتصادی انضمام کی حمایت، وسائل کو برقرار رکھنا، اور جدت اور تکنیکی حل سے فائدہ اٹھانا شامل ہیں۔ جبکہ ابھرتی ہوئی ٹیکنالوجی اور پالیسی اور فیصلہ سازی کے عمل پر ان کے اثرات دریافت کیے جائیں گے۔"

توقع ہے کہ مملکت اپنے وژن 2030 کی سماجی اور اقتصادی پیش رفت اور کئی شعبوں میں سرمایہ کاری کے مواقع کو بھی نمایاں کرے گی۔

ڈیووس میں عالمی اشرافیہ کا اجتماع

شرقِ اوسط کے اور کلیدی بین الاقوامی رہنما اس ہفتے عالمی اقتصادی فورم میں شرکت کریں گے جس میں غزہ اور یوکرین میں جنگوں کے خاتمے کے لیے بات چیت کو عالمی اشرافیہ کے ایجنڈے میں سرِفہرست رکھا جائے گا۔

سالانہ ڈبلیو ای ایف اجتماع کے صدر بورگے برینڈے نے منگل کو کہا کہ ڈیووس کے سوئس سکی ریزورٹ میں 54 واں اجلاس آج تک کے پیچیدہ ترین جغرافیائی سیاسی پس منظر میں ہوگا۔

شرح سود کی پالیسیوں میں تبدیلی اور بڑھتے ہوئے قرضوں کے ساتھ ایک چیلنجنگ عالمی اقتصادی تصویر بھی مرکزی بینکرز، سرمایہ داروں اور کاروباری رہنماؤں کو درپیش ہو گی۔

رائٹرز کی حاصل کردہ ایجنڈے کی ایک نقل کے مطابق بند دروازوں میں ہونے والے اہم اجلاس کی قیادت برطانوی بینک بارکلیز اور کینیڈین لائف انشورنس کمپنی مینو لائف فنانشل کارپوریشن کے سربراہان کریں گے۔

برینڈے نے کہا کہ اس سال کے اجلاس کی زیادہ تر توجہ شرقِ اوسط، یوکرین اور افریقہ میں جنگوں پر اعلیٰ سطحی سفارتی بات چیت پر ہوگی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں