.

بنیادی جمہوریت نے پاکستان میں بارہ افراد کی جان لے لی

صوبہ پنجاب اور سندھ میں بلدیاتی انتخابات کے پہلے مرحلے میں خونریز تصادم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کے دو صوبوں سندھ اور پنجاب میں بلدیاتی انتخابات کے پہلے مرحلے میں ووٹ ڈالے گئے۔

ووٹنگ کا وقت ختم ہونے کے بعد ووٹوں کی گنتی شروع ہو گئی۔ رات گئے تک سامنے آنے والے نتائج میں پنجاب کے اندر حکمران جماعت مسلم لیگ [نواز] جبکہ سندھ میں پاکستان پیپلز پارٹی کا پلڑا بھاری نظر آیا۔

صوبہ سندھ کے ضلع خیرپور کے علاقے درازاں شریف میں دو گروہوں میں تصادم کے نتیجے میں 12 افراد ہلاک ہوئے۔ بلدیاتی انتخابات کے موقع پر دونوں صوبوں میں ہفتہ کو عام تعطیل تھی۔

تفصیلات کے مطابق صوبہ سندھ کے ضلع خیرپور کے علاقے درازاں شریف کے پولنگ سٹیشن رانی پور کی حدود میں دو گروہوں میں تصادم اور فائرنگ کے تبادلے میں بارہ افراد ہلاک ہوئے۔ فائرنگ کا یہ واقعہ جونیجو پولنگ سٹیشن پر پیش آیا۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق یہ تصادم مسلم لیگ فنکشنل اور آزاد گروپ سچل سرمست کے درمیان ہوا ہے۔ صوبہ سندھ کے وزیرِ اعلٰی سندھ قائم علی شاہ کا تعلق بھی ضلع خیر پور ہی سے ہے۔

بلدیاتی انتخابات کے پہلے مرحلے میں پنجاب کے 12 اضلاع میں دو کروڑ 85 ہزار سے زائد اور سندھ کے آٹھ اضلاع میں 46 لاکھ 18 ہزار سے زائد ووٹرز حق رائے دہی استعمال کیا۔

پنجاب میں لاہور، فیصل آباد، گجرات، چکوال، بھکر، ننکانہ صاحب، قصور، پاک پتن، اوکاڑہ، لودھراں، وہاڑی اور بہاولنگر میں بلدیاتی انتخابات ہوئے.

سندھ میں سکھر، خیرپور، شکار پور، کشمور، گھوٹکی، قمبر، لاڑکانہ، شہداد کوٹ اور جیکب آباد میں پولنگ ہوئی۔

پولنگ کا عمل صبح ساڑھے سات بجے شروع ہوا جو شام ساڑھے پانچ بجے تک بغیر کسی وقفے کے جاری رہا۔

پولیس کے مطابق پولنگ کے دوران لڑائی جھگڑے اور ضابطۂ اخلاق کی خلاف ورزی پر مختلف شہروں میں نو افراد کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔