پاکستان کا قبل از حج فلائٹ آپریشن عروج پر، 9,844 سے زائد عازمین کی مدینہ منورہ آمد

نو مئی سے بڑے شہروں سے تقریباً 40 پروازیں روانہ، عازمین 17 مئی سے مکہ مکرمہ روانہ ہوں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پاکستان کا قبل از حج فلائٹ آپریشن عروج پر ہے اور اب تک 9,844 سے زائد عازمین جنوبی ایشیائی ملک کے مختلف حصوں سے 40 پروازوں کے ذریعے مدینہ منورہ پہنچ چکے ہیں۔

پاکستان کی وزارتِ مذہبی امور کے ترجمان محمد عمر بٹ نے اے پی پی کو بتایا کہ اسلام آباد اور کراچی سے تین تین، لاہور سے چار اور ملتان اور سیالکوٹ سے ایک ایک پرواز سے اتوار کو 3,254 عازمین حج زیارتِ حج سے قبل مدینہ پہنچایا گیا۔

اے پی پی نے کہا، "نو مئی سے مختلف ایئر لائنز نے پاکستان کے بڑے شہروں سے تقریباً 40 پروازیں چلائیں تاکہ اللہ تعالی کے مہمانوں کو زیارت کے پہلے مرحلے میں مقدس شہر مدینہ منورہ پہنچایا جا سکے۔"

بٹ نے کہا کہ جو پاکستانی عازمین مدینہ منورہ میں اپنا آٹھ روزہ قیام مکمل کر لیں گے، ان کی 17 مئی سے مقدس شہر مکہ مکرمہ روانگی شروع ہو جائے گی جہاں دنیا بھر سے مسلمان سالانہ زیارت کے لیے جمع ہونا شروع کر دیں گے۔

انہوں نے کہا کہ وزارت نے پاکستان اور سعودی عرب دونوں سے آنے والے عازمین کو زیادہ سے زیادہ سہولیات فراہم کرنے کے لیے "تفصیلی انتظامات" کیے ہیں۔ انہوں نے کہا، نو مئی کو قبل از حج فلائٹ آپریشن شروع ہونے سے پہلے وزارتِ مذہبی امور نے پاکستانی عازمین کو حج کے فرائض سکھانے کے لیے وسیع تربیتی سیشنز کا انعقاد کیا اور انہیں حکومت کی طرف سے کیے گئے اہم انتظامات سے آگاہ کیا تاکہ ان کی زیارتِ حج کو کسی بھی پریشانی سے محفوظ رکھا جا سکے۔

بٹ نے کہا کہ وزارت نے پاکستان حج مشن کے تحت مکہ مکرمہ اور مدینہ منورہ میں دو مکمل ہسپتال قائم کیے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وہاں ڈاکٹر اور پیرا میڈیکل سٹاف چوبیس گھنٹے ڈیوٹی سرانجام دیتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہسپتالوں میں کل 66 ڈاکٹرز اور پیرا میڈیکس تعینات کیے گئے ہیں جہاں طبی معائنہ کیا جاتا ہے اور مفت ادویات فراہم کی جاتی ہیں۔

اس سال زیارتِ حج 14 جون سے 19 جون تک جاری رہنے کی امید ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں