آئی فون کے نئے ایڈیشن پر صارفین کو کیا شکایات ہیں اورکیا احتیاطی اقدامات کرنا چاہئیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

بلا شبہ چوبیس گھنٹوں کے دوران سینکڑوں لوگوں کے نئے آئی فون کے انتظار میں ’ایپل‘ کے اسٹوروں کے سامنے جمع ہوئےتوایپل بلاشبہ عالمی چیمپئن بن گیا۔

تنقید کا جواب دیا

آئی فون کا نیا ایڈیشن جیسے ہی لانچ ہوا اس پر تنقید بڑھ گئی، کیونکہ صارفین نے ٹائٹینیم مواد کے رنگ میں تبدیلی دیکھی جس سے فون چھونے پر بنایا جاتا ہے، جس سے ان کے تحفظات بڑھ گئے۔

صارفین نے شکایت کی ہے کہ نئے فون کے دھاتی فریم میں رنگ کی تبدیلی بنیادی طور پر کناروں میں ہوتی ہے۔

انہوں نے نشاندہی کی کہ سرمئی رنگ میں "iPhone 15 Pro" فونز میں مسئلہ زیادہ عام دکھائی دیتا ہے۔

تاہم ایپل کے کچھ محافظوں نے وضاحت کی کہ دھات کے فریم کے رنگ میں تبدیلی نقصان یا خراشوں کی وجہ سے نہیں ہے، بلکہ انسانی جلد یا پرفیوم یا شیمپو میں پائے جانے والے دھات اور کیمیکلز کے درمیان کیمیائی عمل کی وجہ سے ہے۔

انہوں نے اس بات کی بھی نشاندہی کی کہ ایپل فونز کے میٹل فریم کا رنگ تبدیل کرنا کوئی نیا مسئلہ نہیں ہے۔ صارفین اس سے قبل پچھلے آئی فونز بھی اس کا سامنا کر چکے ہیں۔

ایپل نے پہلے ہی خبردار کیا تھا

تھوڑا پیچھے جائیں تو ہم دیکھتے ہیں کہ ایپل نے حقیقت میں اس معاملے کو حل کیا ہے۔ اس نے کچھ عرصہ پہلے کہا تھا کہ ٹائٹینیم سے بنے فون کی باڈی صارف کی جلد سے قدرتی تیل کے سامنے آنے پر رنگ میں عارضی تبدیلیاں دکھا سکتی ہے۔

اگرچہ کمپنی کے ’سی ای او‘ ٹم کک نے 12 ستمبر کو لانچ ایونٹ میں ڈیوائس کی ٹائٹینیم باڈی کی تعریف کی اور اس کے دوہرے فوائد، جیسے وزن میں کمی اور پائیداری میں اضافے کی بات کی تھی مگر ساتھ ہی انہوں نے ممکنہ رنگوں کے فرق سے خبردار کیا۔

اس کے علاوہ ایپل نے حتمی حل کا اعلان نہیں کیا، لیکن اس نے اشارہ کیا کہ وہ اس پر کام کر رہا ہے.

کچھ ماہرین فون استعمال کرنے والوں کو مشورہ دیتے ہیں کہ وہ دھاتی فریم کی رنگینی کے مسئلے کو کم کرنے کے لیے طریقہ کار کے ایک سیٹ پر عمل کریں۔ ورزش کرتے وقت یا پسینہ آتے ہوئے فون کو اٹھانے سے گریز کریں، فون پر پرفیوم یا شیمپو کے استعمال سے گریز کریں اور فون کو باقاعدگی سے صاف کریں اور صفائی کے لیے نرم اور خشک کپڑا استعمال کریں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں