غزہ داخلے کی صورت میں اسرائیل کو بھاری نقصان اٹھانا پڑے گا: القسام بریگیڈ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

تحریک حماس کے عسکری ونگ القسام بریگیڈز نے کہا ہے کہ اگر اسرائیل زمینی راستے سے غزہ میں داخل ہونے کا فیصلہ کرتا ہے تو ہم مکمل طور پر تیار ہیں۔ اگر زمینی راستے سے غزہ میں داخل ہونے کی صورت میں اسرائیل کو بھاری نقصان پہنچانے کے لیے ہم نئے آپشنز اختیار کریں گے۔

القسام بریگیڈ کے ترجمان نے جمعرات کو کہا کہ تحریک حماس نے غزہ کی پٹی کے اطراف کے علاقوں پر اچانک حملے کے چھ دن بعد اسرائیل کے خلاف آپریشن کے لیے ایک بہت بڑا بجٹ مختص کردیا ہے۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ ہم نے اس آپریشن کی منصوبہ بندی احتیاط سے کی ہے۔ اس حوالے سے زمین کی نوعیت اور موسمی حالات کا مطالعہ بھی کیا ہے۔

انہوں نے وضاحت کی کہ معرکہ ’’ طوفان الاقصیٰ‘‘ حماس اور دیگر فلسطینی دھڑوں نے گزشتہ ہفتے کے روز شروع کیا تھا۔ اس آپریشن کو ایک تاریخی فوجی کامیابی تصور کیا جارہا ہے۔

القسام کے ترجمان ابو عبیدہ نے کہا کہ اسرائیل کے ساتھ تنازع میں کوششوں کو متحرک کرنے کے سلسلے میں دوسرے دھڑوں کے ساتھ ہم آہنگی کی رفتار میں اضافہ اور ترقی ہوئی ہے۔ آپریشن ’’ طوفان الاقصیٰ‘‘ میں فورسز کی پیش قدمی کے لیے ہزاروں میزائلوں نے فائر سپورٹ فراہم کی۔

اسرائیلی بمباری کے بعد غزہ میں عمارتیں ملبہ کا ڈھیر بن گئیں
اسرائیلی بمباری کے بعد غزہ میں عمارتیں ملبہ کا ڈھیر بن گئیں

ابو عبیدہ نے وضاحت کی کہ جنگ کے آغاز میں فورسز کی نقل و حرکت کے دوران مشاہداتی ٹاورز، ٹرانسمیشنز اور مواصلاتی نظام کو نشانہ بنایا گیا۔ ہم نے انہیں ڈرونز سے جام کر دیا تھا۔ انہوں نے مزید واضح کیا کہ اس آپریشن کے لیے 3000 ارکان کو بلایا گیا تھا۔ یہ بات بھی سامنے آئی کہ القسام بریگیڈ نے آپریشن کے دوران اسرائیلی غزہ ڈویژن کے تمام 15 مقامات پر حملہ کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں